چلے تو کٹ ہی جائے گا سفر آہستہ  آہستہ| مصطفیٰ زیدی |

چلے تو کٹ ہی جائے گا سفر آہستہ  آہستہ| مصطفیٰ زیدی |
چلے تو کٹ ہی جائے گا سفر آہستہ  آہستہ| مصطفیٰ زیدی |

  

چلے تو کٹ ہی جائے گا سفر آہستہ  آہستہ

ہم اُس کے پاس جاتے ہیں مگر  آہستہ آہستہ

ابھی تاروں سے کھیلو، چاند کی کرنوں سے اٹھلاؤ

ملے گی اس کے چہرے کی سحر  آہستہ  آہستہ

دریچوں کو تو دیکھو، چلمنوں کے راز تو سمجھو

اُٹھیں گے پردہ ہائے بام و در  آہستہ  آہستہ

زمانے بھر کی کیفیّت سمٹ آئے گی ساغر میں

پیو  اُن انکھڑیوں کے نام پر  آہستہ  آہستہ

یونہی اِک روز اپنے دل کا قصہ بھی سنا دینا

خطاب  آہستہ  آہستہ، نظر آہستہ  آہستہ

شاعر: مصطفیٰ زیدی

(شعری مجموعہ:گریباں)

Chalay   To   Katt   Hi   Jaaey   Ga   Safar   Aahista   Aahista

Ham   Uss   K   Paas   Jaatay   Thay   Magar   Aahista   Aahista

 Abhi   Taaron   Say   Khailo  ,  Chaand   Ki   Kirno   Say   Ithlaao

Milay   Gi   Uss   K   Chehray   Ki   Sahar   Aahista   Aahista

 Dareechon   Ko   To   Daikho  ,   Chilmanon    K   Raaz   To   Samjho 

Uthen   Gay   Parda  Ha-e-Baam-o-Dar    Aahista   Aahista

 Zamnaanay   Bhar   Ki   Kaifiyat   Simat    Aaey    Gi   Sagar  Men

Piyo   Un    Ankharriun   K    Naam   Par   Aahista   Aahista

 Yun   Hi   Ik   Roz   Apnay   Dil   Ka      Qissa  Bhi   Sunaa   Dena

Khitaab   Aahista   Aahista  ,  Nazar   Aahista   Aahista 

Poet: Mustafa   Zaidi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -