ہر اِک نے کہا  کیوں تجھے آرام نہ آیا| مصطفیٰ زیدی|

ہر اِک نے کہا  کیوں تجھے آرام نہ آیا| مصطفیٰ زیدی|
ہر اِک نے کہا  کیوں تجھے آرام نہ آیا| مصطفیٰ زیدی|

  

ہر اِک نے کہا  کیوں تجھے آرام نہ آیا

سُنتے رہے ہم ، لب پہ ترا نام نہ آیا

دیوانے کو تکتی ہیں ترے شہر کی گلیاں

نِکلا   تو اِدھر لوٹ کے بدنام نہ آیا

مت پُوچھ کہ ہم ضبط کی کِس راہ سے گُزرے

یہ دیکھ کہ تُجھ پر کوئی اِلزام نہ آیا

کیا جانیے کیا بیت گئی دِن کے سفر میں

وُہ منتظَرِ شام سرِ شام نہ آیا

یہ تِشنگیاں کل بھی تھیں اور آج بھی  زیدی

اُس ہونٹ کا سایہ بھی مرے کام نہ آیا

شاعر: مصطفیٰ زیدی

(شعری مجموعہ:گریباں)

Har   Ik   Nay   Kaha   Kiun   Tujhay   Aaraam   Na    Aaya

Suntay   Rahay  Ham ,  Lab   Pe   Tira   Naam   Na   Aaya

 Dewaanay   Ko   Takti   Hen  Tiray   Shehr   Ki   Galiyaan

Nikla   To   Idhar   Laot    K   Badnaam   Na    Aaya

 Mat  Pocch   Keh   Ham    Zabt   Ki   Kiss   Raah   Say   Guzray

Yeh   Daikh   Keh   Tujh   Pe   Koi   Ilzaam   Na   Aaya

 

Kaya   Jaaniay   Kaya   Beet   Gai    Din   K   Safar   Men

Wo   Mutazir-e-Shaam    Sar-e-Shaam   Na    Aaya

 Yeh   Tishnagiyaan  Kall   Bhi   Theen   Aor   Aaj   Bhi   ZAIDI

Uss   Hont   Ka   Saaya   Bhi   Miray   Kaam   Na   Aaya

 Poet: Mustafa   Zaidi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -