وہی دشتِ بلا ہے اور میں ہوں | مظہر امام |

وہی دشتِ بلا ہے اور میں ہوں | مظہر امام |
وہی دشتِ بلا ہے اور میں ہوں | مظہر امام |

  

وہی دشتِ بلا ہے اور میں ہوں 

زمانے کی ہوا ہے اور میں ہوں  

مگر شاخوں سے پتے گر رہے ہیں 

وہی آب و ہوا ہے اور میں ہوں 

یہ ساری برف گرنے دو مجھی پر 

تپش سب سے سوا ہے اور میں ہوں 

کئی دن سے نشیمن خاک دل کا 

سرِ شاخ ہوا ہے اور میں ہوں 

پہاڑوں پر کہیں بارش ہوئی ہے 

زمیں محوِ دعا ہے اور میں ہوں 

مجھے بھی کچھ نہ کچھ کرنا پڑے گا 

زمانہ سرپھرا ہے اور میں ہوں 

شاعر: مظہر امام

(شعری مجموعہ:پچھلے موسم کا پھول؛سال، اشاعت 1988)

Wahi   Dasht-e-Balaa    Hay   Aor   Main   Hun

Zamaanay    Ki   Hawaa   Hay   Aor   Main   Hun

 Magar    Shaakhon   Say   Pattay   Gir   Rahay    Hen

Wahi    Aab-o-Hawaa     Hay   Aor   Main   Hun

 Yeh    Saari   Barf    Giranay   Do   Mujhi   Par

Tapish   Sab   Say    Siwaa   Hay   Aor   Main   Hun

Kai   Din   Say   Nashaiman   Khaak -e-Dil   Ka

Sar-e-Shaakh-e-Hawaa   Hay   Aor   Main   Hun

 Pahaarron   Par   Kahen   Baarish   Hui    Hay

Zameen   Mahv-e-Duaa   Hay   Aor   Main   Hun

 Mujhay   Bhi   Kuchh   Na   Kuchh   Karna   Parray   Ga

Zamaana   Sar   Phiraa   Hay   Aor   Main   Hun

 Poet: Mazhar    Imam

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -