دنیا کا یہ اعزاز یہ انعام بہت ہے | مظہر امام |

دنیا کا یہ اعزاز یہ انعام بہت ہے | مظہر امام |
دنیا کا یہ اعزاز یہ انعام بہت ہے | مظہر امام |

  

دنیا کا یہ اعزاز یہ انعام بہت ہے 

مجھ پر ترے اکرام کا الزام بہت ہے 

اس عمر میں یہ موڑ اچانک یہ ملاقات 

خوش گام ابھی گردشِ ایام بہت ہے 

بجھتی ہوئی صبحیں ہوں کہ جلتی ہوئی راتیں 

تجھ سے یہ ملاقات سرِ شام بہت ہے 

میں مرحمت خاص کا خواہاں بھی نہیں ہوں 

میرے لیے تیری نگۂ عام بہت ہے 

کم یاب کیا ہے اسے بازارِ طلب نے 

ہم تھے تو وہ ارزاں تھا پر اب دام بہت ہے 

اس گھر کی بدولت مرے شعروں کو ہے شہرت 

وہ گھر کہ جو اس شہر میں بد نام بہت ہے 

شاعر: مظہر امام

(شعری مجموعہ:پچھلے موسم کا پھول؛سال، اشاعت 1988)

Dunay   Ka   Yeh   Aizaaz   Yeh   Inaam    Bahut    Hay

Mujh  Par Tiray Ikraam Ka Ilzaam   Bahut   Hay

Iss   Umr   Men   Yeh   Morr   ,   Achaanak    Yeh   Mulaqaat

 Khush    Gaam    Abhi   Gardish-e-Ayyaam   Bahut   Hay

 Bujhti    Hui   Subhen   Hon   Keh   Jalti   Hui   Raaten

Tujh   Say   Mulaqaat   Sar-e-Shaam   Bahut   Hay

 Main   Marhamat-e-Khaas   Ka    Khahaan   Bhi   Nahen   Hun

Meray   Kiay   Teri     Nigah-e-Aaam   Bahut   Hay

 Kam   Yaab    Kiya    Hay   Usay    Bazaar-e-Talab    Nay

Ham   Thay   To   Wo   Arzaan   Tha   Par   Ab   Daam   Bahut   Hay

 Iss    Ghar   Ki    Badolat     Miray    Miray    Sheron    Ko    Hay    Shohrat

Wo    Gahr      Keh    Jo     Iss     Shehr    Men    Badnaam   Bahut   Hay

Poet: Mazhar   Imam

 

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -