بھرا ہوا تری یادوں کا جام کتنا تھا | مظہر امام |

بھرا ہوا تری یادوں کا جام کتنا تھا | مظہر امام |
بھرا ہوا تری یادوں کا جام کتنا تھا | مظہر امام |

  

بھرا ہوا تری یادوں کا جام کتنا تھا 

سحر کے وقت تقاضائے شام کتنا تھا 

رُخِ زوال پہ رنگِ دوام کتنا تھا 

کہ گھٹ کے بھی مرا ماہِ تمام کتنا تھا 

تھا تیرے ناز کو کتنا مری انا کا خیال 

مرا غرور بھی تیرا غلام کتنا تھا 

جو پو پھٹی تو ہر اک داستاں تمام ہوئی 

عجب کہ ان کے لیے اہتمام کتنا تھا 

انہیں کو یاد کیا جب تو کچھ نہ یاد آیا 

وہ لوگ جن کا زمانے میں نام کتنا تھا 

ابھی شجر سے جدائی کے دن نہ آئے تھے 

پکا ہوا تھا وہ پھل پھر بھی خام کتنا تھا 

وہاں تو کوئی نہ تھا ایک اپنے غم کے سوا 

مرے مکاں پہ مگر اژدہام کتنا تھا 

شاعر: مظہرامام

(شعری مجموعہ:پچھلے موسم کا پھول؛سال، اشاعت 1988)

بھرا ہوا تری یادوں کا جام کتنا تھا 

سحر کے وقت تقاضائے شام کتنا تھا 

Rukh-e-Zawaal    Pe   Rang-e-Dawaam    Kitna   Tha

Keh   Ghatt   K   Bhi   Mira    Maah-e-Tamaam    Kitna   Tha

 Tha   Teray   Naaz   Ko   Kitna   Miri   Anaa   Ka   Khayaal

Mira   Ghoroor   Bhi   Tera   Ghulaam    Kitna   Tha

 Jo   Pao    Phutti   To    Har   Ik   Daastaan   Tamaam   Hui

Ajab    Kej   Un    K   Liay    Ehtamaam    Kitna   Tha

 Unheen   Ko    Yaad    Kaya    Jab   To   Kuchh   Na   Yaad   Aaya

Wo   Log   Jin   Ka   Zamaanay   Men    Naam    Kitna  Tha

Abhi    Shajar   Say    Judaai   K   Din   Na    Aaey   Thay

Pakaa    Hua   Tha   Wo   Phall    Phir    Bhi   Khaam    Kitna   Tha

 

Wahaan    To    Koi   Na   Tah   Aik   Apnay   Zakhm   K   Siwa

Miray    Makaan    Par   Magar    Izzdahaam    Kitna   Tha

 Poet: Mazhar   Imaam

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -