بے نظیر میڈیکل یونیورسٹی،ہائی کورٹ نے تقرریوں کا ریکارڈ طلب کرلیا

بے نظیر میڈیکل یونیورسٹی،ہائی کورٹ نے تقرریوں کا ریکارڈ طلب کرلیا

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر)سندھ ہائی کورٹ نے شہید محترمہ بے نظیر بھٹو میڈیکل یونیورسٹی لاڑکانہ کے پرو وائس چانسلر کی تقرری کے خلاف درخواست پر تقرریوں کا تین سالہ ریکارڈ طلب کرلیا۔چیف جسٹس سندھ ہائی کورٹ جسٹس احمد علی شیخ کی سربراہی میں دو رکنی بینچ کے روبرو شہید محترمہ بے نظیر بھٹو میڈیکل یونیورسٹی لاڑکانہ کے پرووائس چانسلر کی خلاف ضابطہ تقرری سے متعلق سماعت ہوئی۔ درخواست گزار کے وکیل نے کہا کہ میڈیکل کالج میں نااہل افراد کو بھرتی کیا جارہا ہے جو پی ایم ڈی سی کے معیار پر پورا نہیں اترتے۔ درخواست گزار عنایت اللہ مگسی کے وکیل نے کہا کہ پیپلز پارٹی کی حکومت نے امان اللہ جوکھیو کو خلاف ضابطہ بے نظیر یونیورسٹی کا پرو وائس چانسلر مقرر کیا۔ یونیورسٹی میں بڑی پیمانے پر غیر معیاری بھرتیاں کی گئیں۔ چیف جسٹس نے موقف سننے کے بعد ریمارکس دیئے کہ بس بہت ہوگیا خلاف ضابطہ بھرتیاں برداشت نہیں کریں گے۔ چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ وائس چانسلر تو رول ماڈل ہوتا ہے ایسے عہدوں پر بھی نااہل لوگوں کو بھرتی کیا جائے گا ؟ عدالت نے بے نظیر میڈیکل یونیورسٹی میں تقرریوں کا تین سالہ ریکارڈ طلب کرلیا۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -