ماہ محرم الحرام شوبز سرگرمیاں محدود،فنکاروں کے گھروں پر محافل ومجالس

ماہ محرم الحرام شوبز سرگرمیاں محدود،فنکاروں کے گھروں پر محافل ومجالس

حسن عباس زیدی

واقعہ کربلا معرکہ حق و باطل کی پہچان کرواتا ہے اسلام کی سر بُلندی کے لئے نواسہ رسول ؐ امام عالی مقام حسینؓ ابن علی ؓ نے قربانی کی وہ عظیم داستان رقم کی جس مثال آج تک نہیں ملتی حضرت امام حسینؓ نے اپنے خاندان اور اصحاب کو اللہ کی راہ میں قربان کردیا ۔انہوں نے اپنی جان کا کا نذرانہ پیش کرکے ثابت کردیا کہ ظالم کے آگے کبھی سر نہیں جھکانا چاہیے بلکہ دین کی عظمت پر اپنا جان اور مال سب کچھ لُٹا دو۔یزید کا دنیا میں نام و نشان تک مٹ گیا ہے جبکہ امام حسینؓ کی یاد میں تمام مکاتب فکرسے تعلق رکھنے والے مجالس و محافل کا انعقاد کرکے اُن کی عظیم قربانی کی یاد مناتے ہیں ۔شوبز سے وابستہ افراد بھی ماہ محرم کو بڑی عقیدت و احترام سے مناتے ہیں۔فنکار ،ہدایتکار پروڈیوسرز اور تکنیک کاراپنے اپنے گھر نیاز اور مجالس کا اہتمام کرکے واقعہ کربلا کی یاد مناتے ہیں اور شوبز سرگرمیاں محدودجاتی ہیں۔سدرہ نور،نادیہ علی،آفرین پری، خوشبو،ترنم ناز،استاد حامد علی خاں،سلمان امجد امانت علی خاں،شین،سائرہ نسیم،صائمہ اختر،مسز یاسمین شوکت رضوی ،جرار رضوی،دردانہ رحمان ،صومیہ خان،شاہدہ منی،حمیرا چنا اور نجیبہ بی جی کے گھروں پر محافل و مجالس کا اہتمام کرتی ہیں۔یہ تمام فنکار گزشتہ کئی سالوں سے تسلسل کے ساتھ اپنے اپنے گھروں پر مجالس اور محافل کا انعقاد کررہے ہیں ۔محرم الحرام کے دوران سب سے بڑی مجلس شاہدہ منی کے گھر پر ہوتی ہے جس میں فنکاروں کے علاوہ دیگر شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والوں کی کثیر تعداد شرکت کرتی ہے۔ ماہ محرم کے حوالے سے اظہار خیال کرتے ہوئے میلوڈی کوئین آف ایشیاء پرائڈ آف پرفارمنس شاہدہ منی،میگھا،ماہ نور،یار محمد شمسی صابری،سہراب افگن ،سدرہ نور،نادیہ علی،آفرین پری، خوشبو،ترنم ناز،ندا چوہدری ،استاد حامد علی خاں،سلمان امجد امانت علی خاں،شین،سائرہ نسیم،صبا ء کاظمی،صائمہ اختر،مسز یاسمین شوکت رضوی ،سٹار میکر جرار رضوی،آغا حیدر،دردانہ رحمان ،قیصر ثنا ء اللہ خان ،مایا سونو خان،عباس باجوہ،مختار چن،آشا چوہدری،اسد مکھڑا،وقا ص قیدو،چوہدری ارشد،چنگیز اعوان،حسن مراد،حاجی عبد الرزاق،خالد معین بٹ ،مجاہد عباس،ڈائریکٹر ڈاکٹر اجمل ملک،کوریوگرافر راجو سمراٹ،صومیہ خان،حمیرا چنا ،اچھی خان،شبنم چوہدری،محمد سلیم بزمی،استاد رفیق حسین،فیاض علی خاں،پروڈیوسر شوکت چنگیزی،ظفر عباس کھچی،ڈی او پی راشد عباس،پرویز کلیم اور نجیبہ بی جی کا کہنا ہے کہ عہد حاضر میں اسوہ شبیریؓ پر عمل پیرا رہتے ہوئے انسانیت کے دشمنوں کی سازشوں کو ناکام بنانا اور حسینیتّ کے پیغام کو عام کرنا امت مسلمہ کی ذمہ داری ہے۔ ہم محرم الحرام اور عزاداری حسینّ کے ساتھ ان ایام میں مسلمان عالم کے علاوہ حق وحقیقت اور حریت و آزادی کے علمبرداروں کو تسلیت پیش کرتے ہیں۔تاریخ اس اعتبار سے نہایت بخیل واقع ہوئی ہے کہ یہ اپنے دامن میں شاذ و نادر ہی واقعات کو جگہ دے پاتی ہے ورنہ ہر روز نہ جانے کتنے واقعات رونما ہوتے رہتے ہیں کوئی ان کا پرسان حال بھی نہیں ہوتا جبکہ کچھ ایسے واقعات ہوتے ہیں جن کا تذکرہ سرسری طور پر ہو جاتا ہے اور بس، لیکن اس کے برعکس کچھ واقعات ایسے ہوتے ہیں کہ وہ تاریخ میں شہ سرخی کے طور پر ثبت ہو جاتے ہیں۔ انہی میں سے ایک واقعہ ’’واقعہ کربلا ‘‘بھی ہے جو آج بھی اپنی اسی آب و تاب کے ساتھ زندہ ہے جتنا کل تھا بلکہ یوں کہا جائے تو بے جا نہ ہو گا کہ جتنا جتنا وقت گزرتا جا رہا ہے یہ واقعہ اتنا ہی اپنا رنگ گہرا کرتا جا رہا ہے یعنی جس قدر بشریت کی ترقی و عروج کا سفر آگے بڑھ رہا ہے اسی قدر یہ واقعہ اپنی حقانیت ظاہر کرتا جا رہا ہے۔ تبھی تو جوش ملیح آبادی کہہ گئے ہیں کہ ’’انسان کو بیدار تو ہو لینے دو،ہر قوم پکارے گی ہمارے ہیں حسینّ‘‘آج دنیا میں ایسے افراد بہت کم ہوں گے جو نواسہ رسول جگر گوشہ بتول حضرت امام حسین بن علی ابن ابی طالبّ کے نام سے آشنا نہ ہوں۔فنکاروں کا کہنا ہے کہ یزید نے جو مظالم ڈھائے ہیں اُن کے سامنے چنگیز خان اور ہلاکو خان کے ظلم بھی چھوٹے نظر آتے ہیں امام حسینؓ نے اپنے نانا رسول اللہؐ کے دین کی سرفرازی کے لئے جو قربانی دی اس قیامت تک اسلام کا بول بالا کردیا ۔ یزید اپنے مظالم کی وجہ لعنت کاحقدار ہے دنیا کا ہر شخص اس پر لعنت بھیجتا ہے جبکہ علماء کرام امام حسینؓ کی قربانی کی داستان کے ذریعے دنیا کو بتا تے ہیں دین کی بُلندی کے لئے ہمیشہ آلؓ محمدؐ نے قربانی دی ہے۔ آج دنیا کے کونے کونے میں اذان کے ذریعے اللہ کی شان بیان ہوتی ہے یہ سب امام حسینؓ کی قربانی کا صلہ ہے انہوں نے یزید کی بیعت کرنے کی بجائے اللہ کی راہ میں جان دینے کو بہتر جانا اور اپنے نانا رسول اکرمؐ کے دین کی عظمت پر شب خون مارنے والے اسلام دشمن عناصر کے منصوبے خاک میں ملادیئے ۔واقعہ کربلا ہمیں انسانیت کا درس دیتا ہے۔ یزید کے مظالم پر انسانیت آج بھی خون کے آنسو روتی ہے قیامت ہر درد دل رکھنے والا کربلا کے واقعے کو یاد کرکے روتا رہے گا۔ مسلمان امام حسینؓ کے نقش قدم پر چل کر ایک بار پھر پوری دنیا پر حکمرانی کرسکتے ہیں۔ واقعہ کربلا ظالم کے سامنے کلمہ حق بلند کرنے کا نام ہے آج امام حسینؓ کا نام سب لیتے ہیں جبکہ یزید پر اُ س کے مظالم کی وجہ سے ہر ذی شعور لعنت بھیجتا ہے۔مین ہر سال محرم کی پانچ تاریخ کو اپنے گھر پر نیاز کا اہتمام کرتی ہوں۔ واقعہ کربلا کی یاد ہر مسلمان کو منانی چاہیے امام حسینؓ کی قربانی کی مثال قیامت تک نہیں ملے گی۔ واقعہ کربلا ہمیں اسلام کی سر بلندی کا درس دیتا ہے امام حسین نے دین حق کے لئے اپنا سب کچھ لُٹا دیا ۔واقعہ کربلا اسلام کا سیاہ باب ہے۔معرکہ کربلا کو 14سو سال کا عرصہ گذر چکاہے لیکن آج بھی اس کی یاد شان و شوکت سے منائی جاتی ہے اسلام کے دشمن اور یزید کے پیروکار دنیا کے امن کو تباہ کرنے کے لئے اس وقت بھی دہشت گردی میں مصروف ہیں۔دہشت گردی کی وجہ سے ہزاروں بے گناہ جان گنوا چکے ہیں۔ یزید کے شرمناک فعل کی جتنی بھی مذمت کی جائے وہ کم ہے۔اگر ہماپنی زندگی کو کامیاب بنانا چاہتے ہیں تو ہمیں امام حسین کے نقش قدم پر چلنا ہوگا۔ امام عالی مقامؓ کی مظلومیت پر جتنے بھی آنسو بہا ئے جائیں وہ کم ہے۔واقعہ کربلا کی یاد ہر مسلمان کو عقیدت کے ساتھ منانی چاہیے۔امام حسینؓ نے اسلام کو بچانے کے لئے جو کارنامہ انجام دیا اُس پر اُن کی ذات پر لاکھوں سلام دین کی خاطر انہوں نے اپنا سب کچھ قربان کردیا یزید نے امام عالی مقام پر مظالم ڈھا کر ہمیشہ کے لئے لعنت کو اپنا مقدر بنا لیا۔ جو شخص محر م کا احترام نہیں کرتا وہ مسلمان کہلانے کا حقدار نہیں ہے۔یزیدی افواج کے مظالم سُن کر ہر درد دل رکھنے والے کی روح کانپ جاتی ہے ۔ایسے مظالم کی مثال تاریخ انسانیت میں نہیں ملتی ہے۔مذہب اسلام کا ہر پیروکار یزید کی مذمت اور امام عالی مقام کی عظمت کو سلام پیش کرتا ہے۔ واقعہ کربلا کو یاد کرکے ہردل خون کے آنسو روتا ہے میں ہر سال اپنے گھر پر نیاز کا اہتمام کرتی ہوں۔امام عالی مقامؓ نے جان کا نذرانہ پیش کرکے دین حق کی عظمت کو بلند کیا اور یزید کا غرور خاک میں ملا دیا۔یزید آج کہیں نظر نہیں آتا جبکہ امام مظلومؓ کی مجالس و محافل جگہ جگہ منعقد ہوتی ہیں۔ یزید کے انسانیت سوز کارنامے پر ہر مذہب اور ملت کے انسان نے احتجاج کیا ہے۔ دیندار افراد کی تو بات ہی درکنار لادین و لامذہب اشخاص تک امام حسینّ کی بارگاہ میں آتے ہیں تو سر تسلیم خم کردیتے ہیں۔ مہاتما گاندھی جیسے انسان دوست سے لے کر اڈولف ہٹلر جیسے درندہ صفت انسان تک درسگاہ کربلا میں دو زانو بیٹھے نظر آتے ہیں۔آخر یہ کیسا واقعہ ہے؟اس واقعہ میں ایسی کونسی خصوصیت پوشیدہ ہے کہ زمانے کی گردوغبار اس کی تابناکی کو بوجھل نہیں کر پا رہی ہے؟ اس واقعے میں ایسی کونسی صفت ہے کہ ساری دنیا کسی مذہب وملت کے تعصب کے بغیر اس واقعہ کی گرویدہ ہے؟ اس کا سادہ اور مختصر سا جواب یہی ہے کہ کربلا اس الہٰی درسگاہ کا نام ہے جس نے سسکتی اور مرتی ہوئی انسانیت کو جینے اور عزت کے ساتھ مرنے کا سلیقہ سکھایا، کربلا ایک ایسے آفاقی مکتب کا نام ہے کہ جہاں آکر انسانیت اپنے کمال وعروج تک پہنچتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ہر انسان مذہب وملت سے ماوراء ہو کر انسان ہونے کے ناطے اپنے اپنے طور پر اس واقعہ کو اپنے لئے نمونہ عمل بنا لیتا ہے۔تاریخ گواہ ہے کہ اس واقعہ کے ذریعہ نواسہ رسول امام حسین کا ہدف اس کے ماسوا اور کچھ نہیں تھا کہ اپنے اور اپنے بعد آنے والے معاشروں کی اصلاح فرمائیں تبھی تو فرمایا تھا ’’ میں اس لئے مدینہ چھوڑ رہا ہوں کہ اپنے جد کی امت کی اصلاح کروں۔ میں چاہتا ہوں کہ امر بالمعروف اور نہی عن المنکر کروں‘‘ یعنی امام حسینّ کا مقصد اور ہدف یہی تھا کہ بنی نوع بشر کو اس’’ مدینہ فاضلہ ‘‘ تک لے آئیں کہ جس کی طرف اس نے رسول اکرم ؐکے دور سے سفر شروع کیا تھا لیکن منزل تک آنے سے پہلے ہی منزل گم ہوگئی تھی۔حق وباطل کے اس معرکے میں ایک طرف فرزند رسول جگر گوشہ بتول حضرت امام حسینّ تھے، تو دوسری طرف ظالم و جابر اور فاسق و فاجر حکمراں یزید پلید تھا۔ حضرت امام حسینّ نے یزید کے خلاف علم جہاد اس لئے بلند کیا کہ اس نے بیت اللہ الحرام اور روضہ نبوی کی حرمت کو پامال کرنے کے علاوہ اسلام کی زریں تعلیمات کا تمسخر اڑاتے ہوئے ہر قسم کی برائیوں کو فروغ دیا اور ایک بار پھر دور جاہلیت کی باطل اقدار کو زندہ کر کے دین مبین اسلام کو مسخ کرنے کی کوشش کی جس کی خاطر پیغمبر اکرمؐ نے 23برس تک اذیت وتکالیف برداشت کی تھیں۔ حضرت امام حسینّ دین اسلام کے وہ محافظ ہیں جنہوں نے اپنے خون مطہر ہ سے شجر اسلام کی آبیاری کی، اسی لئے ایک معاصر عربی ادیب نے کہا ہے’’اسلام قیام کے لحاظ سے محمدی اور بقا کے اعتبار سے حسینی مذہب ہے۔‘‘نواسہ رسول امام حسینّ یزید پلید کے خلاف اٹھے اور اس طرح اٹھے کہ ایک مختصر عرصہ میں بشریت کو اس مقام پر لا کر کھڑا کردیا کہ جہاں اس کا سر فخر سے بلند تھا اور لبوں پر تبسم نغمہ افشانی کررہا تھا جبکہ دوسری جانب شام کا’’سبز محل‘‘ کھنڈروں میں تبدیل ہو کر زمانہ کے لئے درس عبرت بن گیا تھا۔ اس لئے خواجہ معین الدین چشتی کو کہنا پڑ گیا کہ ’’شاہ است حسینّ،بادشاہ است حسین،دین است حسینّ دین پنا ہ است حسینّ سرداد نداد دست دردست یزید،حقا کہ بنائے لا الٰہ است حسینّ‘‘یہی واقعہ کربلا کا خاصہ ہے کہ روز عاشور حضرت امام عالی مقام حسین بن علی ابن ابی طالبّ نے اپنے چند ساتھیوں کیساتھ ایک ایسا تاریخی انسان ساز انقلاب برپا کیا کہ بادشاہ وقت کے محل میں اتھل پتھل مچ گئی، وہ معیارات و حقائق جن پر وقت کی تیز رفتار آندھیوں نے پردہ ڈال دیا تھا، یک لخت ہٹ گیا۔کربلا اس انقلاب کا نام ہے جو اپنے بعد رونما ہونیوالے ہر انقلاب اور تحریک کا سرچشمہ ہے۔ عصر حاضر میں اس کی واضح اور روشن ترین مثال ایران کا اسلامی انقلاب ہے جس کے بانی حضرت امام خمینی نے بارہا اور مختلف مقامات پر اس حقیقت کا برملا اظہار فرمایا کہ ایران کا اسلامی انقلاب واقعہ کربلا کا ایک پر تو ہے، اگر واقعہ کربلا رونما نہ ہوا ہوتا تو ایران میں کبھی بھی انقلاب رونما نہیں ہوسکتا تھا۔کربلا کا اہم ترین درس شہادت، ایثار اور فدا کاری ہے۔ امام حسین علیہ السلام نے فقط انسانیت کی بقا کی خاطر کربلا کے تپتے ریگزار میں اپنا بھرا گھر حتیٰ کہ اپنا ششماہی فرزند شہزادہ علی اصغرّ بھی قربان کردیا۔ ایثار، فدا کاری، قربانی وغیرہ یہ وہ اعلیٰ انسانی صفات ہیں کہ اگر کسی معاشرہ یا قوم میں پیدا ہو جائیں تو وہ قوم یا معاشرہ کبھی بھی تاریخ کی اندھیری کوٹھریوں میں دفن نہیں ہوسکتا اور یہی وہ صفات ہیں جن کو امام حسین علیہ السلام نے 61ھ میں بشریت کا خاصہ بنا دیا اور آج چودہ صدیاں گزر جانے کے بعد بھی واقعہ کربلا کی بازگشت چہار جانب سنائی دے رہی ہے۔اگر تاریخ کے اوراق پر سرسری نظر بھی ڈالی جائے تو ایسی نہ جانے کتنی مثالیں مل جائیں گی جن کا سرچشمہ اور منبع واقعہ کربلا ہے۔ یہی کربلا کا ہدف بھی تھا کہ انسان بیدار ہو جائے، مظلوم، ظالم کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر گفتگو کرے، ذلت کی زندگی کے بجائے عزت کے ساتھ مر جانا سیکھے۔ فداکاری، ایثار و قربانی جیسے جذبوں کو اپنے اندر پیدا کرے، پھر فتح اس کی ہوگی جو ان صفات کا حامل ہوگا۔ ظالم یعنی باطل کو ایک نہ ایک دن ماضی کا حصہ بننا ہی ہوتا ہے۔ یہی وہ پیغام ہے جو واقعہ کربلا ہمیں دیتا ہے اور یہی وجہ ہے کہ ہزاروں برس گزر جانے کے باوجود کربلا آج بھی زندہ ہے اور اس وقت تک رہے گی جب تک اس پیغام کو سننے والے باقی رہیں گے۔’’حقیقت ابدی ہے مقام شبیری،بدلتے رہتے ہیں انداز کوفی وشامی‘‘

مقام حسین بن علی ابن ابی طالبّ اہلسنت مآخذ کی روشنی میں امام احمد بن حنبل نے اپنی مسند میں ایک حدیث نقل کی ہے جس کو ان کے علاوہ دیگر اکابرین اہل سنت من جملہ، ابن ماجہ، ابو بکر سیوطی، ترمذی، ابن حجر، حاکم، ابن عساکر، ابن اثیر، حموینی، نسائی وغیرہ نے بھی مستند حوالوں کے ساتھ حضور اکرم صلی ا? علیہ وآلہ وسلم سے روایت کی ہے کہ آپ نے فرمایا: الحسن ولحسین سیدا شبا ب اہل الجنہ’’ حسن وحسین جوانان جنت کے سردار ہیں۔ اس حدیث کے راویوں میں امیر المومینین حضرت علی ابن ابی طالبّ کے علاوہ اکابر صحابہ کرام جن میں حضرت عمر وابو بکر، ابن مسعود، حذیفہ، جابر بن عبداللہ، عبد اللہ بن عمر، قرہ، مالک بن الحویرث بریدہ، ابو سعید خذری، ابوہریرہ، انس، اسامہ اور براء4 رضی اللہ عنہم شامل ہیں، قابل ذکر ہیں۔حضرت امام حسینّ کے بارے میں پیغمبر اکرم ؐ ایک اور مشہور حدیث ہے’’حسین منی وانا من حسین ‘‘(حسین مجھ سے ہیں اور میں حسین سے ہوں)اس حدیث میں آپ کے ساتھ امام عالی مقام حسین بن علیّ کے خونی رشتے کے علاوہ دونوں ہستیوں کے روحانی اور معنوی روابط کی صراحت ملتی ہے، جس کی تعبیر یہ ہے کہ دین اسلام جس کی بنیاد رسول خدا نے رکھی تھی اور اس کا تحفظ حضرت امام حسینّ نے کیا۔ اس حدیث کو تواتر کے ساتھ سنی مآخذ میں بیان کیا گیا ہے اور بعض مآخذ میں اس جملے کے ساتھ دیگر جملے بھی نقل کئے گئے ہیں کہ آپ نے فرمایا ’’جس نے حسینّ سے محبت کی اس نے اللہ سے محبت کی ‘‘نیز فرمایا ہے خدایا جس نے ان دونوں حسنینّ سے دشمنی کی میں بھی اس کا دشمن ہوں۔’’حسینّ مجھ سے ہے اور میں حسینّ سے ہوں‘‘والی حدیث کو نقل کرنے والے سنی اکابرین میں ابن ماجہ، ترمذی، ابو ہریرہ، نسائی، ابن اثیر، سیوطی، امام احمد بن حنبل اور طبری وغیرہ قابل ذکر ہیں۔ حضرت امام حسینّ کی عظمت اور پیغمبر اکرمؐ کی ان سے فرطِ محبت کا اندازہ ابو ہریرہ کی اس روایت سے بھی کر سکتے ہیں۔ اہل سنت کے مآخذ اور مشہور سنی محدثین ومورخین کی روایات سے یہ بات ثابت ہوتی ہے کہ حسنینّ سے دوستی مومنین پر فرض ہے اوران سے محبت کے بغیر کسی شخص کا ایمان کامل نہیں ہوتا اور ان سے مقابلہ کرنے والا یا بغض رکھنے والا ان مآخذ کی روشنی میں خدا اور رسول خدا کا دشمن قرار پاتا ہے۔ ترمذی، ابن ماجہ، ابن حضر، امام احمد بن حنبل، حاکم، ابوبکر سیوطی، ابو سعید خدری، سبط ان الجوزی، عباسی خلیفہ ہارون الرشید، مؤرخ طبری حضرات وغیرہ نے عبداللہ بن عمر، یعلی بن مرہ، سلمان فارسی ودیگر اکابر صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے حوالے سے ایسی احادیث نقل کی ہیں، جن کا مفہوم یہ ہے کہ حضورؐنے ان لوگوں سے محبت و دوستی کا اظہار فرمایا ہے جو حسنین کریمینّ سے محبت و دوستی رکھتے ہیں اور ان لوگوں کے ساتھ نفرت و عناد کا اعلان فرمایا ہے جو امام حسنّ و امام حسینّ سے

دشمنی رکھتے اور بغض کا اظہار کرتے ہیں۔ نیز ان احادیث میں ان لوگوں کے لئے جنت نعیم کی بشارت دی گئی ہے جو حسنینّ سے محبت کرتے ہیں اور ان لوگوں کے جہنم واصل ہونے کی خبر دی گئی ہے جو ان دونوں سے بغض وعناد رکھتے ہیں۔ اس کے علاوہ ان میں سے بعض حوالوں میں حضرت امام حسینّ کے ماں باپ کا بھی ذکر ہے اور یہ ارشاد نبوی نقل کیا گیا ہے کہ ’’جس نے مجھ سے محبت کی اور ان دونوں (حسنینّ)اور ان کے ماں باپّ سے محبت کی، وہ قیامت کے دن میرے ساتھ میرے برابر مقام پائے گا۔ ‘‘ان مفاہیم کی حامل احادیث میں یہ حدیث بھی شامل ہے جس کے راوی حضرت عبد اللہ بن عمر ہیں اور اس کو ابن عبد البر، ابو حاتم اور محب طبری نے روایت کی ہے۔ حدیث میں کہا گیا ہے کہ حضور صلی ا? علیہ وآلہ وسلم نے امام حسنّ کی طرف اشارہ کرتے ہوئے فرمایا’’من احبنی فلیحب ہذین‘‘جس نے مجھ سے محبت کی اس کوچاہئے کہ ان دونوں(حسنینّ) سے بھی محبت کرے۔مذکورہ احادیث نبوی کی روشنی میں یہ بات اظہر من الشمس ہے کہ اہل بیت رسول کے ساتھ دشمنی رسول خدا کے ساتھ دشمنی کے مترادف ہے اور ان سے محبت کا مطلب خدا و رسول سے چاہت کا اظہار ہے۔ ان احادیث کے مفاہیم کو ایمان کے اصول و شرائط کے تحت پرکھنا چاہئے کیونکہ تکمیل ایمان کی شرط عشق رسول ہے جس کے بغیر مسلمان اخروی فلاح نہیں پا سکتا۔ چنانچہ شاعر مشرق حضرت علامہ محمد اقبال نے کہا ہے کہ’’اسلام کے دامن میں بس دو ہی تو چیزیں ہیں،اک ضربِ یدالہیّ اک سجدہ شبیریّ ،کی محمد سے وفا تو نے تو ہم تیرے ہیں،یہ جہاں چیز ہے کیا لوح وقلم تیرے ہیں‘‘اسی طرح آل محمد سے عشق ومحبت کے بغیر عشق رسول ادھورا ہے جس کا مطلب ایمان میں نقص ہے لیکن کربلا میں یزید لعین نے ہزاروں افراد کا لشکر بھیج کر نہ صرف اہل بیت رسولؐ کی توہین کی بلکہ رسول اللہؐ کے نواسے کو بے دردی سے شہید کیا اور رسول زادیوں کو کوفہ و شام کے بازاروں میں سر برہنہ پھرایا، درباروں میں کئی کئی گھنٹوں ٹھہرایا اور پابند سلاسل کیا جن کی محبت کو پیغمبر اسلام نے امت پر فرض قرار دیا تھا۔

مزید : ایڈیشن 2