پاکستان کو اسلامی ریاست کے بجائے سیکیورٹی سٹیٹ بنانا افسوسناک ہے،ساجد نقوی

پاکستان کو اسلامی ریاست کے بجائے سیکیورٹی سٹیٹ بنانا افسوسناک ہے،ساجد نقوی

لاہور ( ایجوکیشن رپورٹر) علامہ سید ساجد علی نقوی نے کہاہے کہ پاکستان واقعتاً ریاست مدینہ کے خواب کی تعبیر کیلئے معرض وجود میں آیا، بابائے قوم نے فرمایا تھا کہ پاکستان کو اسلامی قوانین کی تجربہ گاہ بنایا جائیگا، افسوس ملک کو اسلامی فلاحی جمہوری ریاست بنانے کی بجائے سیکورٹی سٹیٹ میں تبدیل کردیاگیا، ریاست مدینہ کے دعوؤ ں کی بجائے مسلمہ تقاضے پورے کئے جائیں، اختیارات کے درست استعمال، آئین و قانون کی بالادستی، شہری و عوامی حقوق کا تحفظ، چیف ایگزیکٹو کے اختیارات کا درست استعمال ، فرد کی عزت، حیثیت اور جائز مقام سمیت ناجائز پابندیوں کے خاتمے سے ہی ریاست مدینہ کا تصور ابھر کر سامنے آئیگا، چیف جسٹس آف پاکستان کے خیالات کو سراہتے ہیں ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے بابائے قوم کے 70 یوم وفات پر اپنے پیغام میں اظہار خیال کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے کہاکہ آج کل ریاست مدینہ کاتذکرہ اور دعوی بارہا کیا جارہاہے لیکن ریاست مدینہ کے تقاضوں کوپورا کرنا ضروری ہے، ریاست مدینہ بنیادی انسانی حقوق پر قائم ہوئی جہاں قانون کی حکمرانی، عوام کے بنیادی شہری حقوق کا تحفظ، معاشرے کے نچلے طبقات کے ساتھ مساوات اور دشمنوں تک سے حسن سلوک کی مثالیں واضح ہیں۔ پاکستان کو صحیح معنوں میں ریاست مدینہ بنانے کیلئے گڈگورننس ، قانون کی حکمرانی اور آئین کی بالادستی قائم کرنا ہوگی، اختیارات کا درست استعمال حق چیف ایگزیکٹو کے پاس ہونا چاہیے جو مشاورت سے یہ حق استعمال کرے اور عوام کو ریاست کے فیصلوں پر جوابدہ بھی ہو، شہری آزادیوں کا تحفظ، فرد کی عزت، حیثیت و جائز مقام دیا جائے

مزید : میٹروپولیٹن 1