راجن پور ، روجھان کے تعلیمی مسائل کم کرنیکی کوششیں تیز

راجن پور ، روجھان کے تعلیمی مسائل کم کرنیکی کوششیں تیز

جام پور( نامہ نگار )وزیر تعلیم پنجاب کی زیر صدارت تعلیمی اصلاحات کے سلسلہ میں منعقدہ میٹنگ میں راجن پور کے مسائل اور مستقبل کی حکمت عملی پر سی ای او تعلیم چوہدری مقبول گجر نے بھر پور انداز میں نمائندگی اور موقف پیش کرکے حقیقی معنوں میں تعلیم دوستی کا ثبوت دیا ہے۔ سیاسی (بقیہ نمبر31صفحہ12پر )

وسماجی اور پنجاب ٹیچرز یونین خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔ جلد سات سو پچاسی پرائمری سکولوں میں صفائی کے لیے خاکروبوں کی بھرتی کی منظوری اور نو سو ستر اضافی کلاس رومز اور روجھان اور پچادھ کے علاقوں میں مقامی لوگوں کی بھرتی کے علاوہ تعلیمی قابلیت میں کمی کی منظوری امکان ہے ۔ وزیر تعلیم پنجاب ڈاکٹر مراد راس کی زیر صدارت اجلاس ہو ا جس میں ڈیرہ۔ راجن پور سمیت چاروں اضلاع کے سی ای اوز اور ارکان اسمبلی نے شرکت کی۔ سی ای او تعلیم چوہدری مقبول گجر نے راجن پور کی بھر پور نمائندگی کی۔ اور راجن پورکی جغرافیائی حالت کے مطابق تعلیم کے شعبہ میں اصلاحات لانے کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ روجھان اور پچادھ کے علاقوں میں اس وقت تعلیم بہتر ہو سکتی ہے جب مقامی لوگ بھرتی ہونگے۔ اور ایجوکیٹرز کی بھرتی میں تعلیمی شرائط میں کمی کی جائے ۔نو سے زائد سکولوں میں نئے کمرہ جات اور دیگر مسائل بیان کرکے حقیقی معنوں میں تعلیم دوستی کی مثال قائم کی ہے۔ ضلع وائس چیرمین مرزا شہزاد ہمایوں ۔ چیرمین مرزا قیصر خان مغل۔ بھولا خان ڈینہ۔ سردار منصور اختر خان لغاری۔ سردار شریف خان لنڈ۔ وائس چیرمین عبدالمجید خان ڈھول۔ ملک فیاض پاشا۔ پنجاب ٹیچرز یونین کے ضلع صدر سید قیصر حسین بخاری۔ اور جماعت اہلسنت کے ضلع صدر ملک فیض احمد ارائیں ودیگر نے سی ای اوچوہدری مقبول گجر کے اس اقدام کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ آج اپنے حقوق کے لیے ہر محاذ پر لڑنا پڑتا ہے۔ راجن پور بے پناہ مسائل کا شکار ہے۔ مقامی لوگوں کی بھرتی سے راجن پور تعلیم کے شعبہ میں بے حد ترقی کرئے گا۔ تخت لاہور نے دس سال تک راجن پور کے حقوق استحصال کیے رکھے۔ اب وقت آگیا ہے کہ ہمیں اپنے حقوق کے لیے اواز بلند کرنی پڑے گی۔

تعلیمی مسائل

مزید : ملتان صفحہ آخر