وزیر اعظم تعلیم ، صحت اور روزگار کے سلسلے میں فوری اقدامات کریں

وزیر اعظم تعلیم ، صحت اور روزگار کے سلسلے میں فوری اقدامات کریں

ملتان(پ ر) عمران خان سرائیکی صوبے سے پہلے تعلیم ‘ صحت اور روزگار کے سلسلے میں وہ اقدامات فوری طور پر کر سکتے ہیں ‘ جن کے لئے اسمبلی سے دو تہائی اکثریت کی ضرورت نہیں ۔ ان خیالات کا اظہار سرائیکستان قومی کونسل کے (بقیہ نمبر36صفحہ12پر )

اجلاس میں کیا گیا ۔ جس کی صدارت ظہور دھریجہ نے کی ۔ اجلاس میں ڈیرہ اسماعیل خان سے آئے ہوئے کارکنوں کے علاوہ سرائیکی رہنما رانا امیر علی امیر ‘ عاشق صدقانی ‘ عبداللطیف بھٹی ‘ مسیح اللہ خان جامپوری ‘ سعید ثروت ‘ الطاف خان اور دوسروں نے شرکت کی ۔ انہوں نے کہا کہ گومل یونیورسٹی میں سرائیکی شعبہ آٹھ سال سے منظور ہے ۔ مگر اس کے لئے پیشرفت نہیں کی جا رہی ۔ اس سلسلے میں 15 اگست 2018ء کو نئے سرے سے ایک نوٹیفکیشن بھی جاری کیا گیا جس میں سرائیکی کے ساتھ پشتو وغیرہ بھی شامل کر دیے گئے مگر اس پر بھی کوئی پیشرفت نہیں کی جا رہی ۔ وزیراعظم اپنے گورنر کے ذریعے فوری طور پر اس پر عمل درآمد کرا سکتے ہیں ۔ اسی طرح زکریا یونیورسٹی کے سرائیکی ایریا سٹڈی سنٹر کی ذیلی شعبہ جات کو فنکشنل نہیں کیا جا رہا ۔ اسلامیہ یونیورسٹی میں خواجہ فرید چیئر کو غیر قانونی طور پر بند رکھا جا رہا ہے۔ میٹرک کا نصاب دو سالوں سے منظور ہے مگر پڑھانے کیلئے اساتذہ ہیں اور نہ ہی کتابیں ۔ سرائیکی وسیب کے کالجوں میں فوری طور پر ایک سو میل فی میل لیکچرر کی آسامیاں درکار ہیں مگر روڑے اٹکائے جا رہے ہیں ۔ اسی طرح غازی یونیورسٹی ‘ سرگودھا یونیورسٹی ‘ وویمن یونیورسٹی ملتان اور وویمن یونیورسٹی بہاولپور میں سرائیکی شعبہ جات کھولنے کی ضرورت ہے مگر ن لیگ کی حکومت اس کی راہ میں آڑے آتی رہی ۔ اب یہ کریڈٹ فوری طور پر اس حکومت کو لے لینا چاہئے ۔ تعلیم کے ساتھ ساتھ صحت اور روزگار کے سیکٹر میں بھی انقلابی تبدیلیاں کی جا سکتی ہیں اور ملتان سے سکھر تک سی پیک کے منصوبے میں سرائیکی وسیب کے زمینداروں سے جس طرح اونے پونے دام زمین چھینی گئی ‘ اس کی تحقیقات کی ضرورت ہے اور اس علاقے میں سی پیک منصوبے کے تحت فوری طور پر ٹیکس فری زون نہ بنایا گیا تو ہر جگہ احتجاج کریں گے۔ ظہور دھریجہ نے کہا کہ ہم نے چارٹر آف ڈیمانڈ دے دیا ہے اس پر فوری عمل درآمد سے حکومت اپنی نیک نامی میں اضافہ کر سکتی ہے اور قوم کو تبدیلی کا حقیقی معنوں میں پیغام دے سکتی ہے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر