گمشدہ بچوں کی بازیابی سے متعلق کیس میں سندھ ہائیکورٹ کا بچوں کی بازیابی کے لئے پولیس کو تمام جدیدتکنیکس استعمال کرنے کا حکم

گمشدہ بچوں کی بازیابی سے متعلق کیس میں سندھ ہائیکورٹ کا بچوں کی بازیابی کے ...
گمشدہ بچوں کی بازیابی سے متعلق کیس میں سندھ ہائیکورٹ کا بچوں کی بازیابی کے لئے پولیس کو تمام جدیدتکنیکس استعمال کرنے کا حکم

  

کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن)23 گمشدہ بچوں کی بازیابی سے متعلق درخواستوں کی سماعت میں سندھ ہائیکورٹ نے آئندہ سماعت پر آئی جی سندھ کو طلب کرتے ہوئے بچوں کی بازیابی کے لئے پولیس کو تمام جدیدتکنیکس استعمال کرکے تین ہفتوں میں رپورٹ جمع کرانے کا حکم دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق 23 گمشدہ بچوں کی بازیابی سے متعلق درخواستوں کی سماعت سندھ ہائیکورٹ میں ہوئی ۔سندھ ہائیکورٹ نے پولیس کی کارکردگی پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ لاپتا بچوں کی عدم بازیابی پر سخت تشویش ہے جس پر سرکاری وکیل نے موقف اپنایا کہ بچوں کی گمشدگی سے متعلق 22 ایف آئی آرز درج کر لی ہیں۔ ڈی آئی جی کرائم نے عدالت میں بیان دیا کہ ہم نے آئی جی سندھ کے حکم پر ٹیم بنائی تھی،ایک بچی کو بازیاب کروالیا ہے۔سندھ ہائیکورٹ نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ 23 میں سے صرف ایک بچے کو بازیاب کروایا گیا ہے،پولیس کی تحقیقات بہت ہی سست ہیں، پولیس حکام لاپتا بچوں کی بازیابی کو جلدسے جلد یقینی بنائیں۔عدالت نے آئی جی سندھ کی بنائی ہوئی ٹیم پرعدم اطمینان کااظہارکرتے ہوئے آئندہ سماعت پر آئی جی سندھ کو طلب کرلیااور ریمارکس دیئے کہ بچوں کی بازیابی کے لئے ڈی آئی جی کی سربراہی میں نئی ٹیم بنائی جائے اور آئندہ سماعت پر آئی جی سندھ کلیم امام خود پیش ہوکر وضاحت پیش کریںاورجب تک بچے بازیاب نہیں ہوتے ڈی آئی جی ہر سماعت پر پیش ہوں۔سندھ ہائیکورٹ نے اے وی سی سی(سی آئی اے)کی کارکردگی پربھی عدم اطمینان کااظہارکرتے ہوئے بچوں کی بازیابی کے لئے پولیس کو تمام جدیدتکنیکس استعمال کرنے کاحکم دے دیا اور بچوں کو بازیاب کراکے تین ہفتوں میں رپورٹ دینے کا بھی حکم سنا دیا۔

مزید : قومی /جرم و انصاف /علاقائی /سندھ /کراچی