حکومت نے فائنانس ایکٹ 2018 کے انکم ٹیکس آرڈیننس میں بعض ترامیم کردیں

حکومت نے فائنانس ایکٹ 2018 کے انکم ٹیکس آرڈیننس میں بعض ترامیم کردیں
حکومت نے فائنانس ایکٹ 2018 کے انکم ٹیکس آرڈیننس میں بعض ترامیم کردیں

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)حکومت نے فائنانس ایکٹ 2018 کے انکم ٹیکس آرڈیننس میں بعض ترامیم کردیں جس کے مطابق تنخواہ دارطبقے کےلیے دی گئی رعایت کم کردی گئی ہے ۔

فائنانس ایکٹ 2018 کے انکم ٹیکس آرڈیننس میں کی گئی ترامیم کے مطابق چارلاکھ روپے تک سالانہ آمدن پرکوئی ٹیکس نہیں ہوگاجبکہ 4 لاکھ سے 8 لاکھ روپے سالانہ آمدن پرایک ہزارروپے ٹیکس ہوگا۔اسی طرح 8لاکھ روپے سے12لاکھ روپے سالانہ آمدن پر2ہزارروپے ،12لاکھ روپے سے 24لاکھ روپے تک سالانہ آمدن پر5فیصد اور 24 لاکھ سے زیادہ اور48لاکھ روپے سے کم رقم پر10فیصد اضافی ٹیکس دینا ہوگا،اس طرح 24 لاکھ روپے سے48لاکھ روپے تک سالانہ آمدن پر60ہزارروپے ٹیکس ہوگا۔ترمیم کے مطابق 48 لاکھ روپے سے زیادہ سالانہ آمدن پر3لاکھ فکسڈ ٹیکس اوراضافی 15فیصد دینا ہوگا۔

مزید : قومی /سیاست /علاقائی /اسلام آباد