شانگلہ، آل پارٹیز گرینڈ جرگہ کی ملاکنڈ میں ٹیکس لگا نے کی مخالفت

شانگلہ، آل پارٹیز گرینڈ جرگہ کی ملاکنڈ میں ٹیکس لگا نے کی مخالفت

الپوری (بیورورپورٹ) شانگلہ آل پارٹیز گرینڈ جرگہ نے ملاکنڈ ڈویشن فری ٹیکس زون میں حکومت کو ٹیکسزز لگانے کی مخالفت کردی،کسی بھی قسم کی ٹیکس دینے کوتیار نہیں۔ ایک ہفتے کے اندر ٹیکس لگانے کا فیصلہ واپس لیا جائے۔ ایک ہفتہ بعد میرہ بشام ریتی باجری نکالنے پر کام شروع کیا جائے گا اگر حکومت نے روکاوٹ ڈالی تو عوام سڑکوں پر نکل کر دما دم مست قلندر کرکے تمام شہراؤں کو بلاک کردینگے۔ گرینڈ جرگہ نے حکومت پر واضح کردیا کہ ریتی باجری ندی نالوں وغیرہ پر ٹیکسزز لگانا یہاں کے غریب عوام کے ساتھ موجودہ حکومت کی جانب سے ظلم زیادتی ہے جو کسی صورت برداش نہیں کرینگے۔ وزیراعلی اور تحریک انصاف ممبران اسمبلی ملاکنڈڈویژن کے عوام سے وعدے پورا کریں روزگار چھیننے کی بجائے روزگار دیں۔ گرینڈ جرگہ اور آل پارٹیز کے رہنماؤں سمیت حکومتی پارٹی رہنماؤں نے بھی ملاکنڈڈویژن میں ہر قسم کی ٹیکس لگانے کی مخالفت کردی ریتی باجری کے ٹینڈروں کو فی الفور کنسل کرنے کا مطالبہ کردیا۔ گرینڈ جرگہ میں شا نگلہ سے مسلم لیک نواز کے رکن قومی اسمبلی ڈاکٹر عباد اللہ خان،عوامی نیشنل پارٹی کے محمدیار خان،متوکل خان ایڈوکیٹ،حکمران جماعت تحریک انصاف کے سابق امیدوار قومی اسمبلی وقار خان،جمعیت علماء اسلام کے عماد خان،حاجی عزیزالرحمان ، حاجی سدید الرحمان، شانگلہ ایکشن کمیٹی و شانگلہ بار ایسوسی ایشن کے نمائندوں سمیت ہر سیاسی جماعت کے علاقائی مشران ودیگر نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔ جرگہ ممبران نے حکومت کو ٹیکسزز کا فیصلہ واپس لینے کیلئے ایک ہفتے کی ڈیڈ لائن دے کر کہا کہ اگر فیصلہ واپس نہ لیا گیا تو شانگلہ کی تمام عوام سڑکوں پر نکلنے کے بعد شاہراہ قراقرم سمیت تمام شاہراؤں کوبند کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔جرگہ کے مشران نے وزیراعلی خیبر پختونخواہ اور تحریک انصاف ملاکنڈ ڈویژن کے ممبران اسمبلی شوکت یوسف زئی سے مطالبہ کیا کہ وزیراعلی محمود خان کا تعلق بھی سوات سے ہے لہذا وزیراعلی کوچاہیئے کہ وہ اس ظالمانہ فیصلے کو واپس لیں اور ملاکنڈ ڈویژن کے عوام کو ریلیف دینے کی بجائے ان غریب عوام پر رحم کرکے ملاکنڈ ڈویژن کے عوام کے حق میں فیصلہ دے کر ان کو روزگار دیں۔میرہ بشام ریتی کی بندش سے ہزاروں لوگ گزشتہ کئی عرصے سے بے روزگار ہوکر گھر بیٹھ کر رزق حلال کمانے سے محروم ہوچکے ہیں ملاکنڈ ڈویژن کے عوام زلزلہ، سیلاب اور دہشت گردی کے ستائے ہوئے ہیں انکے زخموں پر مرہم رکھنے کی ضرورت ہے نہ کہ تحریک انصاف کی حکومت ان پر نمک پاشی کریں سوات کے وزیراعلی کو یہاں کے عوام کے ساتھ کھڑے ہونے کی ضرورت ہیں پی ٹی آئی کو ووٹ دینے کی تحفے میں ان پر ٹیکسزز لگانا غریب عوام کے ساتھ سراسر ظلم ناانصافی ہے۔جرگہ ممبران اور عمائدین علاقہ نے آئندہ لائحہ عمل کے لئے اتوار کے روز بشام پی ٹی ڈی سی ہوٹل میں میٹنگ طلب کرلی ہے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...