چارسدہ، چپل میکرزایسوسی ایشن کا گستاخانہ خاکوں کیخلاف احتجاجی مظاہرہ 

  چارسدہ، چپل میکرزایسوسی ایشن کا گستاخانہ خاکوں کیخلاف احتجاجی مظاہرہ 

  

چارسدہ (بیورورپورٹ)تحفظ ختم نبوت کے حوالے سے چپل میکر ایسوسی ایشن کے زیر اہتمام فاروق اعظم چوک میں جلسہ۔ ٹریفک کا نظام درہم برہم۔ جلسے میں دیگر تاجر تنظیموں کی شرکت۔ تفصیلات کے مطابق چارسدہ میں نبوت کا دعوی کرنے والے شہری، فرانس میں گستاخانہ خاکوں کی اشاعت اور صحابہ کرام کے حوالے سے توہین آمیز تقریروں کے خلاف چپل میکر ایسو سی ایشن کی طرف سے فاروق اعظم چوک چارسدہ میں احتجاجی مظاہرہ کیا گیا۔ احتجاجی مظاہرے میں تاجر تنظیموں نے بھی شرکت کی۔ احتجاجی مظاہرے سے خطاب کر تے ہوئے جے یوآئی کے ضلعی امیر مولانا سید گوہر شاہ، چپل میکر ایسو سی ایشن کے صدر شریف گل، ختم نبوت تحصیل چارسدہ کے امیر مولانا عبدالوہاب، حکیم اللہ فوجی، لعل محمد لعل، صالح شاہ باچا، ظہور ظریف خیل اور دیگر نے نبوت کا دعوی کرنے والے بشیر مستان، فرانس میں گستاخانہ خاکو ں اور صحابہ کرام کی توہین پر شدید غم و غصہ کا اظہار کیا اور کہا کہ ایک سوچے سمجھے منصوبے کے تحت مسلمانوں کے مذہبی جذبات کو ٹھیس پہنچایا جا رہا ہے۔ شان رسول ؐاور شان صحابہ کے حوالے سے توہین کسی صورت برداشت نہیں کیا جا سکتا۔مسلمان نبی پاک ؐ اور صحابہ کرام کی ناموس پر جانوں کی قربانی دینے سے دریغ نہیں کریں گے۔مقررین نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ توہین رسالت قانون پر عمل درآمد نہیں ہو رہا جس کی وجہ سے آئے روز ایسے واقعات رونما ہو رہے ہیں۔ موجودہ حکومت قادیانیوں کو سپورٹ کر رہے ہیں۔ پولیس نے نبوت کا دعوی کرنے والے بشیر مستان کو گرفتار کیا اور اب اس کو پروٹوکول کے ساتھ بیرون ملک منتقل کیا جائیگاجو کسی صورت قابل قبول نہیں۔ مقررین نے کہا کہ بشیر مستان چارسدہ کا شہری نہیں اس لئے اس کا نام چارسدہ سے نہ جوڑا جائے۔ مقررین نے کہا کہ توہین رسالت کے مرتکبین کو عدالت سزائیں نہیں دے رہی۔ 1300گستاح رسول جیل میں ہے اور برسوں سے ان پر مقدمات چلائے جا رہے ہیں۔ آئین پاکستان میں گستاح رسول ْﷺ کیلئے موت کی سزا ہے مگر سزاؤں پر عمل درآمد نہیں ہو رہا ہے۔ مقررین نے مطالبہ کیا کہ توہین رسالت کے مرتکبین کیلئے حصوصی عدالت قائم کرکے اس میں علمائے کرام کو شامل کیا جائے۔ 

مزید :

پشاورصفحہ آخر -