تم ملے بھی تو ملاقات نہ ہونے پائی | احمد مشتاق|

تم ملے بھی تو ملاقات نہ ہونے پائی | احمد مشتاق|
تم ملے بھی تو ملاقات نہ ہونے پائی | احمد مشتاق|

  

تم ملے بھی تو ملاقات نہ ہونے پائی

شام آئی تھی مگر رات نہ ہونے پائی

ان کہی بات نے اک حشر اُٹھا رکھا تھا

شور اتنا تھا کوئی بات نہ ہونے پائی

درد نے سیکھ لیا اپنی حدوں میں رہنا

خواہشِ وصلِ مناجات نہ ہونے پائی

کون سے وہم کے پردے تھے دلوں میں حائل

کیوں تری ذات مری ذات نہ ہونے پائی

دل ہی آمادۂ صحرا ہو تو کیوں کر کہیے

زندگی باغِ طلسمات نہ ہونے پائی

شاعر: احمد مشتاق

(شعری مجموعہ:گردِ مہتاب،سالِ اشاعت1981)

Tum    Milay    Bhi    To    Mulaqaat    Na    Honay    Paai

Shaam    Aai    Thi    Magar    Raat    Na    Honay    Paai

An   Kahi    Baat    Nay    Ik    Hashr    Utha    Rakha    Tha

Shor    Itna    Tha    Koi    Baat    Na    Honay    Paai

Dard    Nay    Seekh    Lia    Apni    Hadon    Men    Rehna

Khaahish -e- Wasl - e- Manajaat    Na    Honay    Paai

Kon    Say    Wehm    K    Parday    Thay    Dilon    Men   Haail

Kiun    Tiri     Zaat    Miri     Zaat    Na    Honay    Paai

Dil    Hi    Amaada -e- Sehra    Ho    To    Kiun    Kar    Kahiay

Zindagi     Baagh -e- Tilismaat     Na    Honay    Paai

Poet: Ahmad Mushtaq

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -