سہراب گوٹھ میں مبینہ مقابلے میں مرنے والا شخص منشیات فروش نہیں عام شہری نکلا ، نجی ٹی وی کا دعویٰ ، ورثا کا بیان بھی سامنے آ گیا

سہراب گوٹھ میں مبینہ مقابلے میں مرنے والا شخص منشیات فروش نہیں عام شہری نکلا ...
سہراب گوٹھ میں مبینہ مقابلے میں مرنے والا شخص منشیات فروش نہیں عام شہری نکلا ، نجی ٹی وی کا دعویٰ ، ورثا کا بیان بھی سامنے آ گیا

  

کراچی (ڈیلی پاکستان آن لائن)کراچی کے علاقے سہراب گوٹھ میں مبینہ مقابلے میں مرنے والا شخص منشیات فروش نہیں عام شہری نکلا ۔

نجی ٹی وی جی این این نے ذرائع کے حوالے سے کہاہے کہ کراچی کے علاقے سہراب گوٹھ میں مبینہ پولیس مقابلے میں مرنے والا شخص منشیات فروش نہیں عام شہری تھا۔

پولیس نے دو روز قبل منشیات فروش سرتاج عرف تاجو کومقابلے میں مارنے کا دعویٰ کیاتھا،مبینہ مقابلے میں مرنے والے شخص کے اہلخانہ کے ورثاکا ویڈیو بیان سامنے آگیا،ورثانے الزام عائد کیا ہے کہ فیصل ابڑو بے گناہ تھاجسے پولیس نے ماورائے عدالت قتل کیا۔

فیصل ابڑو کے کزن عرفان کاکہنا ہے کہ میرا کزن فیصل ابڑو لاڑکانہ سے کراچی رشتہ داروں سے ملنے آیا تھا،میرے کزن کا نام فیصل ہے سرتاج عرف تاجو نہیں ،پولیس اہلکار میرے کزن کو نماز جمعہ کے دوران مسجد سے لے کر گئے ،نمازیوں نے بتایا مسجد کے باہر لے جا کرفیصل کی ٹانگوں پر گولیاں ماری گئیں ۔

جبکہ پولیس کا دعویٰ ہے کہ فیصل عرف سرتاج عرف تاجو ایک ہی شخص ہے ، ہلاک ملزم کے بھائی عامر، خان محمد اور عبدالغفار بھی منشیات فروش ہیں ۔

امام مسجد کاکہناہے پولیس جس لڑکے کو لے کر گئی اس کی عمر 20 سے 22 سال تھی ، نماز جمعہ کے خطبے کے دوران مسجد کے باہر شدید فائرنگ ہوئی تھی ، نوجوان کو لے جانے کے بعد نمازیوں سے کہاکہ کوئی بھی خطبہ چھوڑ کر نہ جائے ۔

مزید :

علاقائی -سندھ -کراچی -