کہیں امید سی ہے دل کے نہاں خانے میں​ | احمد مشتاق|

کہیں امید سی ہے دل کے نہاں خانے میں​ | احمد مشتاق|

  

کہیں امید سی ہے دل کے نہاں خانے میں​

ابھی کچھ وقت لگے گا اِسے سمجھانے میں​

موسمِ گل ہو کہ پت چھڑ ہو بلا سے اپنی​

ہم کہ شامل ہیں نہ کھلنے میں نہ مرجھانے میں​

ہم سے مخفی نہیں کچھ راہگزرِ شوق کا حال​

ہم نے اک عمر گزاری ہے ہوا  کھانے میں​

ہے یوں ہی گھومتے رہنے کا مزا ہی کچھ اور​

ایسی لذّت نہ پہنچنے میں نہ رہ جانے میں​

نئے دیوانوں کو دیکھیں تو خوشی ہوتی ہے​

ہم بھی ایسے ہی تھے جب آئے تھے ویرانے میں​

موسموں کا کوئی محرم ہو تو اس سے پوچھو​ں

کتنے پت جھڑ  ابھی باقی ہیں بہار آنے میں

شاعر: احمد مشتاق

(شعری مجموعہ:گردِ مہتاب،سالِ اشاعت1981)

Kahen   Umeed    Si    Hay   Dil     K    Nihaan    Khaanay    Men

Abhi    Kuch    Waqt    Lagay    Ga    Isay    Samjhaanay    Men

Mosam -e- Gul    Ho    Keh   Patjharr    Ho    Balaa    Say    Apni

Ham    Keh    Shaamil    Hen    Na    Khilnay    Men     Na    Murjhaanay    Men

Ham    Say    Makhfi    Nahen    Kuch    Rehguzar -e- Shaiq    Ka    Haal

Ham    Nay    Ik    Umr    Guzaari    Hay    Hawaa    Khaanay     Men

Hay   Yunhi    Ghoomtay    Rehnay    Ka    Maza     Hi    Kuch    Aor

Aisi    Lazzat    Na    Pahunchnay    Men    Na    Reh    Jaanay    Men

Naey    Dewaanon    Ko    Dekhen    To    Khushi    Hoti    Hay

Ham   Bhi    Aisay    Hi    Thay    Jab    Aaey    Thay    Weraanay    Men

Mosamon    Ka    Koi    Mahram    Ho   To    Uss    Say    Poochun

Kitnay    Patjharr    Abhi    Baaqi    Hen    Bahaar    Aanay    Men

Poet: Ahmad Mushtaq

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -