میٹھی نیند میں آئیں گے سپنے نئے جہان کے | احمد مشتاق|

میٹھی نیند میں آئیں گے سپنے نئے جہان کے | احمد مشتاق|
میٹھی نیند میں آئیں گے سپنے نئے جہان کے | احمد مشتاق|

  

میٹھی نیند میں آئیں گے سپنے نئے جہان کے

ہجر کی ٹھنڈی رات میں سو جا چادر تان کے

ہر موسم کے پھول سے سجی تھی خواب کی کارض

آنکھ کھلی تو فرش پر ٹکڑے تھے گلدان کے

شہر تو کب کا مٹ چکا لیکن اب تک یاد ہیں

کسی مکان کی جالیاں شیشے کسی مکان کے

نئے ہیں اب تک دو ورق یاد کی پھٹی کتاب میں

نرم عبارت آنکھ کی جملے دبی زبان کے

دل کے اندر دیرسے موسم تھا برسات کا 

آخر دُھندلے پڑ گئے نقش تری پہچان کے

شاعر: احمد مشتاق

(شعری مجموعہ:گردِ مہتاب،سالِ اشاعت1981)  

Meethi    Neend    Men    Aaen    Gay    Sapnay    Naey    Jahaan    K

Hijr    Ki    Tahndi    Raat    Men    So    Ja    Chaadar   Taan    K

Har    Maosam   K    Phool    Say    Saji    Thi    Khaab    Ki   Kaariz

Aankh    Khuli    To    Farsh    Par   Tukrray    Thay    Guldaan    K

Shehr    To    Kab    Ka    Mitt     Chuka    Lekin    Ab    Tak    Yaad    Hen

Kisi   Makaan    Ki    Jaalyaan  ,    Sheeshay    Kisi    Makaan    K

Naey    Hen    Ab   Tak    Do    Waraq    Yaad    Ki    Phatti    Kitaab    Men

Narm    Ibaarat     Aankh   Ki   Jumlay    Dabi    Zubaan    K

Dil    K    Andar    Dair    Say    Maosam    Tha    Barsaat   Ka

Aakhir    Dhundlay    Parr    Gaey    Naqsh    Tiri    Pehchaan   K

Poet: Ahmad Mushtaq

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -