تونسہ شریف میں بچوں کے سامنے خاتون سے مبینہ زیادتی کا ایک اور واقعہ، ملزمان اب کہاں ہیں ؟ حیران کن خبر آ گئی 

تونسہ شریف میں بچوں کے سامنے خاتون سے مبینہ زیادتی کا ایک اور واقعہ، ملزمان ...
تونسہ شریف میں بچوں کے سامنے خاتون سے مبینہ زیادتی کا ایک اور واقعہ، ملزمان اب کہاں ہیں ؟ حیران کن خبر آ گئی 

  

تونسہ شریف (ڈیلی پاکستان آن لائن )موٹروے پر خاتون کے ساتھ بچوں کے سامنے جنسی زیادتی کے واقعہ کا غم ابھی کم نہ ہواتھا کہ وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کے آبائی علاقے تونسہ شریف میں بھی ایسا ہی دلخراش واقعہ پیش آیا لیکن ملزمان نے عدالت سے 6 اکتوبر تک عبوری ضمانت حاصل کر لی ہے اور شامل تفتیش ہو گئے ہیں ۔

تفصیلات کے مطابق تونسہ شریف کے نواحی علاقے ریتڑہ میں خاتون کو بچوں کے سامنے دو افراد نے مبینہ طور پر جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا اور فرار ہو گئے تاہم بعد ازاں انہوں نے مقامی عدالت میں پیش ہو کر عبوری ضمانت حاصل کر لی ہے ۔ دنیا نیوز کے مطابق ڈی ایس پی تونسہ سعادت علی چوہان نے ’دنیا‘ سے گفتگوکرتے ہوئے کہاکہ میڈیکل ہوگیاہے اور مقدمہ درج کر لیا گیا ہے۔ ملزموں نے 6 اکتوبر تک عبوری ضمانت کرالی اور شامل تفتیش ہوگئے ہیں، ملزمان نے کہاہے کہ ہمارا ڈی این اے کرایا جائے ، اگر ہم قصوروار ہوئے تو ہمارے خلاف کارروائی کی جائے۔ دوسری جانب وزیراعلی ٰ عثمان بزدار نے تونسہ شریف کے علاقے میں خاتون سے مبینہ زیادتی کے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے آر پی او ڈیرہ غازی خان سے رپورٹ طلب کر لی ہے۔

میڈیا رپورٹس میں بتایا جارہاہے کہ متاثرہ خاتون کے لواحقین 24گھنٹے تک تھانہ ریتڑہ،ڈی ایس تونسہ اورٹی ایچ کیو ہسپتال تونسہ کے چکر لگاتے رہے ، پولیس نے 24 گھنٹے کے بعد احتجاج کے بعد مقدمہ درج کیا۔ بتایا گیا ہے کہ واقعہ رات کے 11 بجے ہوا، 2 ملزموں فیاض اور الٰہی بخش نے مبینہ طور پر شادی شدہ خاتون کو نشانہ بنایا۔ملزمان کی عبوری ضمانت کا عدالتی حکمانہ سوشل میڈیا پر وائرل ہو چکاہے ۔

مزید :

جرم و انصاف -