خاک پر خلدِ بریں کی باتیں | احمد ندیم قاسمی|

خاک پر خلدِ بریں کی باتیں | احمد ندیم قاسمی|
خاک پر خلدِ بریں کی باتیں | احمد ندیم قاسمی|

  

خاک پر خلدِ بریں کی باتیں

چاند پر جیسے زمیں کی باتیں

دل سے اِک شمع جبیں کی باتیں

اُسی محفل میں وہیں کی باتیں

لبِ دشمن کو بھی شیریں کردیں

اس کے حسنِ نمکیں کی باتیں

وہم سے بو قلموں کون و مکاں

ورنہ یک رنگ، یقیں کی باتیں

دل کا پتھّر نہ کسی سے پگھلا

لوگ کرتے رہے دیں کی باتیں

میرے ناقد! میرا موضوعِ سخن

یہی دنیا ہے، یہیں کی باتی

شاعر: احمد ندیم قاسمی

(شعری مجموعہ:محیط،سالِ اشاعت2000،بیسواں ایڈیشن)  

Khaak    Par    Khuld  -e-  Bareen    Ki    Baaten

Chaand    Par   Jaisay    Zameen    Ki   Baaten

Dil   Say    Ik    Shama -e- Jabeen    Ki    Baaten

Usi    Mehfill    Men   Wahen    Ki    Baten

Lab -e-Dushman    Ko    Bhi    Shereen    Kar   Den

Uss    K    Husn -e- Namkeen    Ki    Baaten

Wehm    Say    Bu    Kalmoon    Kon -o- Makaan

Warna    Yak    Rang ,  Yaqeen    Ki    Baaten

Dil    Ka    Pather    Na    Kisi    Say    Pighla

Log    Kartay    Rahay    Deen    Ki    Baaten

Meray    Naaqid!   Mira    Maozu -e- Sukhan

Yahi    Dunya    Hay ,  Yaheen    Ki    Baaten

Poet: Ahmad Nadeem Qasmi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -