ریت سے بُت نہ بنا اے مرے اچھے فنکار! | احمد ندیم قاسمی|

ریت سے بُت نہ بنا اے مرے اچھے فنکار! | احمد ندیم قاسمی|
ریت سے بُت نہ بنا اے مرے اچھے فنکار! | احمد ندیم قاسمی|

  

پتھر

ریت سے بُت نہ بنا اے مرے اچھے فنکار!

اک لمحے کو ٹھہر ، میں تجھے پتھر لادوں

میں ترے سامنے انبار لگا دوں، لیکن

کون سے رنگ کا پتھر تیرے کام آئے گا؟

سرخ پتھر جسے دل کہتی ہے بے دل دنیا

یا وہ پتھرائی ہوئی آنکھ کا نیلا پتھر

جس میں صدیوں کے تحیر کے پڑے ہوں ڈورے

کیا تجھے روح کے پتھر کی ضرورت ہوگی؟

جس پر حق بات بھی پتھر کی طرح گرتی ہے

اک وہ پتھر ہے جو کہلاتا ہے تہذیبِ سفید

اس کے مرمر میں سیاہ خون جھلک جاتا ہے

ایک انصاف کا پتھر بھی تو ہوتا ہے مگر

ہاتھ میں تِیشۂ  زَر ہو تو وہ ہاتھ آتا ہے

جتنے معیار ہیں اس دور کے سب پتھر ہیں

جتنے افکار ہیں اس دور کے، سب پتھر ہیں

شعر بھی، رقص بھی، تصویر و غِنا بھی پتھر

میرا الہام، تِرا ذہنِ رسا بھی پتھر

اس زمانے میں ہر اک فن کا نشاں پتھر ہے

ہاتھ پتھر ہیں ترے، میری زباں پتھر ہے

ریت سے بُت نہ بنا،  اےمرے اچھے فنکار!

شاعر: احمد ندیم قاسمی

(شعری مجموعہ:محیط،سالِ اشاعت2000،بیسواں ایڈیشن)  

Pathar

Rait    Say    But    Na    Bana    Ay   Miray    Achay    Fankaar

Aik    Lamhay    Ko    Thahir  ,   Main    Tujhay    Pathar    La    Dun

Main    Tirat    Saamnay    Anbaar    Lagaa   Dun  ,   Lekin

Kon    Say    Rang    Ka    Pathar   Tiray    Kaam    Aaey   Ga

Surkh    Pathar ?   Jisay    Dil    Kehti    Hay    BeDil    Dunya

Ya    Wo    Pathraai   Hui    Aankh    Ka    Neela   Pathar

Jiss    Men    Sadion    K    Tahayyur    K    Parray    Hon    Doray

Kaya     Tujhay    Rooh    K    Pathar    Ki    Zaroorat    Ho    Gi

Jiss    Pe    Haq    Baat    Bhi    Pathar    Ki    Tarah    Girti   Hay

Ik    Wo    Pathar    Hay ,    Jisay    Kehtay    Hen    Tehzeeb -e- Saffaid

Iss   K    Mar   Mar    Men    Sayah    Khoon    Jhalak    Jaata     Hay

Aik    Insaaf     Ka    Pathar    Bhi    To    Hota    Hay ,Magar

Haath    Men    Tesha -e-Zar    Ho    To    Wo    Haath    Aata    Hay

Jitnay    Mayaar    Hen   Iss     Daor   K  ,   Sab    Pathat    Hen

Jitnay    Afkaar    Hen    Iss    Daor    K  ,   Sab    Pathar    Hen

Sher    Bhi  ,    Raqs    Bhi  ,    Tasveer -o- Ginaa    Bhi    Pathar

Mera    Ilhaam ,   Tira    Zehn-e- Rasaa    Bhi    Pathar

Iss     Zamaanay    Men   To    Har    Fan  Ka    Nishaan    Pathar    Hay

Haath     Pathar     Hen    Tiray ,   Meri    Zubaan    Pathar   Hay

Rait     Say    But    Na    Bana    Ay    Miray    Achay   Fankaar

Poet: Ahmad Nadeem Qasmi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -