دیارِ یار میں دیدارِ یار ہی نہ ہوا | احمد ندیم قاسمی|

دیارِ یار میں دیدارِ یار ہی نہ ہوا | احمد ندیم قاسمی|
دیارِ یار میں دیدارِ یار ہی نہ ہوا | احمد ندیم قاسمی|

  

دیارِ یار میں دیدارِ یار ہی نہ ہوا

کہ مُجھ سے حشر تلک انتظار ہی نہ ہوا

اگر فرشتہ نہیں وہ، تو آدمی بھی نہیں

جو قربِ حُسن کا امیدوار ہی نہ ہوا

بجا کہ ان سے ملا درسِ ترکِ عشِق، مگر

کچھ اس طرح کہ مُجھے ناگوار ہی نہ ہوا

اگر فقیہہ نے ٹوکا مُجھے، بجا ٹوکا

گناہِ عشق پہ مَیں شرمسار ہی نہ ہوا

ابھی بہشت کی تنہائی سے نہیں نِکلا

وہ آدمی جسے انساں سے پیار ہی نہ ہوا

یہ پھول تھے، کہ نقوشِ قدم تھے پَت جھڑکے

مجھے تو ان پہ گمانِ بہار ہی نہ ہوا

وہ شعر اور تو سب کچھ ہے، صِرف شعر نہیں

جو رُوحِ عصر کا آئینہ وار ہی نہ ہوا

شاعر: احمد ندیم قاسمی

(شعری مجموعہ:محیط،سالِ اشاعت2000،بیسواں ایڈیشن)  

Dayaar -e-Yaar    Men    Dedaar-e- Yaar    Hi    Na   Hua

Keh    Mujh    Say    Hashr    Talak    Intezaar    Hi    Na    Hua

Agar    Farishta    Nahen    Wo   To    Aadmi    Bhi   Nahen

Jo    Qurb -e- Husn    Ka    Umeed    Waar   Hi    Na    Hua

Baja    Keh    Un    Say    Mila    Dars-e-Tark -e-Eshq    Magr

Kuch    Iss   Tarah    Keh    Mujhay    Nagawaar    Hi    Na    Hua

Agar    Faqeeh     Nay   Toka    Mujhay ,    Baja    Toka

Gunaah-e- Eshq    Pe    Main    Sharmsaar    Hi   Na   Hua

Abhi    Bahisht    Ki    Tanhaai    Say    Nahen    Nikla

Wo   Aadmi    Jisay    Insaan    Say    Payaar    Hi    Na    Hua

Yeh    Phool    Thay     Keh     Naqoosh -e- Qadam    Thay    Patjharr    K

Mujhay    To    Un    Pe      Gumaan -e-Bahaar     Hi    Na    Hua

Wo    Sher    Aor    To    Sab    Kuch    Hay    Sirf    Sher    Nahen

Jo    Rooh -e- Asr    Ka    Aaina    Daar    Hi    Na    Hua

Poet: Ahmad Nadeem Qasmi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -