شعور میں ,کبھی احساس میں بساؤں اسے | احمد ندیم قاسمی|

شعور میں ,کبھی احساس میں بساؤں اسے | احمد ندیم قاسمی|
شعور میں ,کبھی احساس میں بساؤں اسے | احمد ندیم قاسمی|

  

شعور میں, کبھی احساس میں بساؤں اسے

مگر میں چار طرف بے حجاب پاؤں اسے

اگرچہ فرطِ حیا سے نظر نہ آؤں اسے

وہ روٹھ جائے تو سو طرح سے مناؤں اسے

طویل ہجر کا یہ جبر ہے کہ سوچتا ہوں

جو دل میں بستا ہے اب ہاتھ بھی لگاؤں اسے

اسے بلا کے ملا عمر بھر کا سناٹا

مگر یہ شوق کہ اک بار پھر بلاؤں اسے

اندھیری رات میں جب راستہ نہیں ملتا

میں سوچتا ہوں کہاں جا کے ڈھونڈ لاؤں اسے

ابھی تک اس کا تصور تو میرے بس میں ہے

وہ دوست ہے تو خدا کس لیے بناؤں اسے

ندیمؔ ترک محبت کو ایک عمر ہوئی

میں اب بھی سوچ رہا ہوں کہ بھول جاؤں اسے

شاعر:احمدندیم قاسمی

(شعری مجموعہ:محیط،سالِ اشاعت2000،بیسواں ایڈیشن)  

Shaoor    Men ,  Kabhi    Ehsaas    Men    Basaaun    Usay

Magar    Main    Chaar    Taraf     BeHijaab    Paaun    Usay

Agarcheh    Fart -e-Haya    Say    Nazar    Na    Aaun    Usay

Wo   Rootha    Jaey    To    Sao    Tarah    Say    Manaaun    Usay

Taveel    Hijr    Ka    Yeh    Jabr    Hay    Keh    Sochta    Hun

Jo    Dil    Men    Basta    Hay    Ab    Haath    Bhi    Lagaaun    Usay

Usay    Bula    K    Mila    Umr    Bhar    Ka    Sannaata

Magar    Yeh    Shoq   Keh    Ik    Baar    Phir    Bulaaun    Usay

Andhiari    Raat    Men    Jab     Raasta    Nahen   Milta

Main    Sochta    Hun    Kahaan    Say    Dhoond    Laaun    Usay

Abhi    Tak    Uss    Ka    Tasawwar    To    Meray    Bass    Men    Hay

Wo     Dost    Hay    To    Khuda    Kiss    Liay    Banaaun   Usay

NADEEM     Tark -e- Muhabbat     Ko    Aik    Umr    Hui

Main    Ab    Bhi    Soch    Raha   Hun   Keh    Bhool    Jaaun    Usay

Poet: Ahmad    Nadeem    Qasmi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -