یہ نیم خواب گھاس پر اُداس اُداس نقشِ پا | اختر الایمان |

یہ نیم خواب گھاس پر اُداس اُداس نقشِ پا | اختر الایمان |
یہ نیم خواب گھاس پر اُداس اُداس نقشِ پا | اختر الایمان |

  

نقشِ پا

یہ نیم خواب گھاس پر اُداس اُداس نقشِ پا

کچل رہا ہے شبنمی لباس کی حیات کو

وہ موتیوں کی بارشیں فضا میں جذب ہو گئیں

جو خاک دانِ تیرہ پر برس رہی تھیں رات کو

یہ راہروانِ زندگی خبر نہیں کہاں گئے

وہ کون سا جہان ہے ،ازل نہیں ، ابد نہیں

دراز سے دراز تر ہیں حلقہ ہائے روز و شب

یہ کس مقام پہ ہوں میں کہ بندشوں کی حد نہیں

ہے مرکزِ نگاہ پر چٹان سی کھڑی ہوئی

اُدھر چٹان سے پرے وسیع تر ہے تیرگی

اسے پھلانگ بھی گیا تو اُس طرف خبر نہیں

عدم خراب تر ملے، نہ موت ہو نہ زندگی

ہزار بار چاہتا ہوں بندشوں کو توڑ دوں

مگر یہ آہنی رسن، یہ حلقہ ہائے زندگی

لپٹ گئے پاؤں سے لہو  میں جذب ہوگئے

میں نقشِ پائے عمر ہوں ،  فریب خوردہِ خوشی

کوئی نیا افق نہیں جہاں نظر نہ آسکیں 

یہ زرد زرد صورتیں ، یہ ہڈیوں کے جوڑ سے

ہو اکے بازوؤں میں کاش اتنی تاب آ سکے

دکھا سکیں وہ عہدِنو ہی زندگی کے موڑ سے

شاعر: اختر الایمان

(شعری مجموعہ:گرداب،سالِ اشاعت1943)  

Naqsh e Pa

Yeh    Neem    Khaab    Ghaas     Par    Udaas   Udaas    Naqsh -e- Pa

Kuchal    Raha    Hay    Shabnami    Libaas    Ki    Hayaat    Ko

Wo    Motion    Ki     Baarishen    Faza    Men     Jazb    Ho    Gaen

Jo    Khaakdaan -e-Teera    Par    Baras    Rahi    Then    Raat    Ko

Yeh    Rahrawaan  -e - Zindagi    Kahabar    Nahen    Kahan    Gaey

Wo    Kon    Sa    Jahaan   Hay  ,   Azal    Nahen    Abad    Nahen

Daraaz    Say    Daraaz   Tar    Hen    Halqa    Haa -e- Roz -o-Shab

Yeh    Kiss    Maqaam    Par    Hun     Main   Keh    Bandashon    Ki    Had    Nahen

Hay    Markaz -e- Nigaah     Par     Chataan    Si    Kharri    Hui

Udhar     Chataan     Say     Paray     Wasee     Tar    Hay    Teeragi

Usay    Phalaang     Bhi     Gaya    To    Uss    Taraf    Khabar    Nahen

Adam    Kharaab    Tar      Milay   ,   Na     Mot     Ho    Na    Zindagi

Hazaar     Baar     Chaahta     Hun     Bandshon     Ko    Torr    Dun

Magar     Yeh     Aahni   Rasan   ,   Yeh      Halqa     Haa-e- Zindagi

Lipat     Gaey     Paaon     Say     Lahu     Men     Jazb    Ho    Gaey

Main     Naqsh     Paa-e- Umr     Hun   ,    Faraib    Khorda -e -Khushi

Koi     Naya      Ufaq    Nahen     Jahan     Nazar     Na     Aa    Saken

Yeh     Zard    Zard     Soorten   ,   Yeh     Hadion     K    Jorr    Say

Hawa    K     Baazuon    Men     Kaash     Itni    Taab    Aa    Sakay

Dikha    Saken    Wo    Ehd -e- Nao     Hi    Zindagi    K    Morr    Say

Poet: Akhtar   ul    Eman

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -