دور برگد کی چھاؤں میں خاموش و ملول| اختر الایمان |

دور برگد کی چھاؤں میں خاموش و ملول| اختر الایمان |

جس جگہ رات کے تاریک کفن کے نیچے

دور برگد کی چھاؤں میں خاموش و ملول| اختر الایمان |

  

مسجد

دور برگد کی چھاؤں میں خاموش و ملول

جس جگہ رات کے تاریک کفن کے نیچے

ماضی و حال،گنہگار نمازی کی طرح

اپنے اعمال پہ رو لیتے ہیں چپکے چپکے

ایک ویران سی مسجد کاشکستہ سا کلس

پاس بہتی ہوئی ندی کو تکاکرتا ہے

اور ٹوٹی ہوئی دیوار پہ چنڈول کبھی

گیت پھیکا سا کوئی چھیڑ دیا کرتا ہے

گرد آلود چراغوں کوہوا کے جھونکے

روز مٹی کی نئی تہہ میں دبا جاتے ہیں

اور جاتے ہوئے سورج کے وداعی انفاس

روشنی آکے دریچوں کی بجھا جاتے ہیں

حسرتِ شام و سحر بیٹھ کے گنبد کے قریب

ان پریشان دعاؤں کو سنا کرتی ہے

جو ترستی ہی رہیں رنگِ اثر کی خاطر

اور ٹوٹا ہوا دل تھام لیاکرتی ہے

یا ابابیل کوئی آمدِ سرما کے قریب

اس کو مسکن کے لیے ڈھونڈ لیا کرتی ہے

اور محرابِ شکستہ میں سمٹ کر پہروں

داستاں سرد ممالک کی کہا کرتی ہے

ایک بوڑھا گدھا دیوار کے سائے میں کبھی

اونگھ لیتاہے ذرا بیٹھ کے جاتے جاتے

یا مسافر کوئی آ جاتاہے، وہ بھی ڈر کر

ایک لمحے کو ٹھہر جاتا ہے آتے آتے

فرش جاروب کشی کیا ہے سمجھتا ہی نہیں

کالعدم ہو گیا تسبیح کے دانوں کا نظام

طاق میں شمع کے آنسو ہیں ابھی تک باقی

اب مصلیٰ ہے ، نہ منبر، نہ مؤذن ؂نہ امام

آ چکے صاحبِ افلاک کے پیغام و سلام

کوہ و در اب نہ سنیں گے وہ صدائے جبریل

اب کسی کعبہ کی شاید نہ پڑے گی بنیاد

کھو گئی دشتِ فراموشی میں آوازِ خلیل

چاند پھیکی سی ہنسی ہنس کے گزر جاتا ہے

ڈال دیتے ہیں ستارے دُھلی چادراپنی

اس نگارِ دلِ یزداں کے جنازے پہ ، بس اک

چشم نم کرتی ہے شبنم یہاں اکثر اپنی

ایک میلا سا، اکیلا سا، فسردہ سا دِیا

روز رعشہ زدہ ہاتھوں سے کہا کرتا ہے

تم جلاتے ہو ، کبھی آکے بجھاتے بھی نہیں

ایک جلتاہے مگر ایک بجھاکرتا ہے

تیز ندی کی ہر اک موج طلاطم بردوش

چیخ اٹھتی ہے وہیں دُور سے ،فانی فانی

کل بہالوں گی تجھے توڑ کے ساحل کی قیود

اور گنبد و مینار بھی پانی پانی

شاعر: اخترالایمان

(شعری مجموعہ:گرداب،سالِ اشاعت1943)  

Door   Bargad   K  Ghani Chhaaon  Men Khamosh o Malool 

Jis   Jagah   Raat      Keh Tareek   Kafan  Kay Neechay 

Maazi  -o- Haal  Gunahgaar Namazi  Ki  Tarah 

Apnay    Amaal    Pe   Ro   Letay  Hen   Chupkay  Chupkay

 

Ik  Veeran  Si   Masjid   Ka   Shikasta   Sa   Kalas 

Paas   Bahti    Hui   Naddi    Ko   Taka   Karta   Hay 

Aor  Tooti   Hui   Dewaar   Pe   Chandol    Kabhi 

Geet    Pheeka   Sa  Koi   Chhairr   Daya   Karta  Hay 

Gard-Alood    Charaghon   Ko   Hawa    Kay   Jhaonkay 

Roz   Matti    Ki   Nai   Teh   Men   Daba    Jaati   Hen 

Aor    Jaatay    Huay    Suraj   Kay    vidaai    Anfaas 

Raushni    Aa   K    Dareechon    Ki   Bujha   Jaati   Hen 

Hasrat-e-Shaam-o-Sahar    Beth    K    Gumbad   K  Qareeb 

In    Pareshaan    Duaon    Ko   Suna    Karti    Hay 

Jo   Tarasti   Hi    Rahen     Rang -e-Asar    Ki    Khaatir 

Aor    Toota     Hua     Dil    Thaam   Laya   Karti    Hay

 

Ya      Ababeel    Koi      Aamad-e-Sarma    K     Qareeb 

Uss     Ko    Maskan   K    Liay     Dhoond     Lia    Karti   Hay    

Aor     Meraab-e-Shikasta     Men    Simat    Kar   Pahron 

Daatstaan    Sard    Mumaalik    Ki     Kaha    Karti     Hay

 

Ik Boorrha    Gadha      Derwaar    K    Saaey   Men   Kabhi 

Oongh    Leta    Hay   Zara     Baith   K Jaatay    Jaaty  

Ya    Musaafir   Koi    Aa    Jaataa Hay , Wo Bhi Dar Kar  

Ik   Lamhay    Ko   Thahir   Jaata   Hay  Aatay   Aatay

Farsh    Jaroob    Kashi    Kaya   Hay    Samjhta    Hi    Nahen

Kaal     Adam   Ho Gaya     Tasbeh   K    Daanon   Ka   Nizaam   

Taaq    Men    Shama    K    Aansu    Hen    Abhi   Tak    Baaqi 

Ab    Musalla    Hay , Na    Mimbar  ,   Na Muazzin   ,    Na Imaam

 

Aa     Chukay    Sahib-e-Aflaak      K    Paighaam -o- Slaam 

Koh -o -Dar    Ab   Na    Sunen   Gay    Wo    Sadaa-e-JIBREEL 

Ab     Kisi    Kaabay    Ki     Ahayad    Na    Parray     Gi     Bunyaad 

Kho    Gai    Dasht-e-Faramoshi   Men     Awaaz -e- KHALIL 

Chaand     Pheeki    Si   Hansi     Hans    K    Guzar    Jaata     Hay  

Daal     Detay    Hen     Sitaaray     Dhuli    Chaadar    Apni

Iss     Nigaar -e- Dil -e-Yazdaan   K     Janazay    Pe    Bass    Ik 

Chashm      Nam    Karti    Hay    Shabnam   Yahan    Aksar    Apni

Aik    Maila     Sa   ,    Akaila Sa , Fasurda   Sa    Diya 

Roz     Rasha     Zada    Haathon    Say    Kaha    Karta    Hay 

Tum    Jalaatay    Ho  Kabhi    Aa    K    Bujhatay    Bhi     Nahen

Ik    Jalta    Hay   Magar    Ik    Bujha    Karta     Hay

Tez     Nadi     Ki     Har     Ik     Moj-e- Taatum     Bardosh

Cheekh    Uthti    Hay    Wahen    Door    Say    Faani    Faani 

Kall    Bahaa    Lun    Gi     Tujhay     Torr     K     Saahil    Ki     Qayood

Aor     Phir     Gunbad -o- Minaar     Bhi    Paani    Paani 

Poet:Akhatar   ul Eman

 

 

 

 

 

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -