جی سی یو فیصل آباد کا فیکلٹی کی 2نشستوں پر الیکشن کا اعلان 

جی سی یو فیصل آباد کا فیکلٹی کی 2نشستوں پر الیکشن کا اعلان 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


 لاہور (سٹاف رپورٹر)روزنامہ ”پاکستان“ میں خبر کی اشاعت کے بعد فیصل آباد یونیورسٹی کے اساتذہ اور طلباء و طالبات کی سنی گئی۔جی سی یو فیصل آباد کے وائس چانسلر ڈاکٹر شاہد کمال نے فیکلٹی کے مطالبہ پر یونیورسٹی کی اکیڈیمک کونسل میں فیکلٹی کی خالی ہونیوالی دو سیٹیوں پر الیکشن کا اعلان کردیا ہے۔ اکیڈیمک کونسل میں ایسوسی ایٹ پروفیسر کی سیٹ ڈاکٹر محمد شریف کے پروفیسر بننے اور اسسٹنٹ پروفیسر کی سیٹ ڈاکٹر حسیب کے ایسوسی ایٹ پروفیسر بننے کی وجہ سے خالی ہوئی تھیں۔ ان دونوں سیٹوں کے خالی ہونے پر فیکلٹی کی طرف سے مسلسل مطالبہ سامنے آرہا تھا کہ خالی ہونیوالی سیٹوں پر فوری الیکشن کروایا جائے۔ وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر شاہد کمال نے مطالبہ کو تسلیم کرتے ہوئے اکیڈمک کونسل کی خالی ہونیوالی دونوں نشستوں کیلئے شیڈول جاری اور الیکشن کمشن تشکیل دے دیا۔ جاری کردہ شیڈول کے مطابق کاغذات نامزدگی 20 ستمبر  تک جمع،22 ستمبر کی سہ پہر 2 بجے تک کاغذات نامزدگی واپس لئے جا سکیں گے۔ 23 ستمبر  دوپہر ایک بجے امیدواران کی حتمی لسٹ جاری کردی جائے گی۔ پولنگ 27 ستمبر کو صبح 9 بجے سے دن 2 بجے تک ہو گی۔ ڈین سوشل سائنسز پروفیسر ڈاکٹر عاصم محمود کو چیف الیکشن کمشنر، چیئرپرسن سوشیالوجی ڈیپارٹمنٹ پروفیسر ڈاکٹر زہرہ بتول کو الیکشن کمشنر ون اور چئیرپرسن سٹیٹیسٹکس ڈیپارٹمنٹ ڈاکٹر تنویر احمد کو الیکشن کمشنر ٹو جبکہ ایڈیشنل رجسٹرار محمد آصف لطیف کو ڈپٹی الیکشن کمشنر بنایا گیا ہے۔
 الیکشن کا اعلان 

 لاہور (خصوصی رپورٹ) اہل حدیث یوتھ فورس کے زیر اہتمام”تحفظ نظریہ پاکستان ٹرین مارچ“ کا آغاز ہوگیا۔ریلوے اسٹیشن لاہور پر ٹرین مارچ کے شرکاء  سے خطاب کرتے ہوئے مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان کے سربراہ سینیٹر پروفیسر ساجد میر نے کہا کہ الیکٹرانک ووٹنگ مشین پر حکومت دھمکیاں دینا بند کرے،اپوزیشن کو دلائل سے قائل کرے۔یہ کیسی جمہوریت ہے کہ شفاف الیکشن کے نام پرآمرانہ انداز اپنایا جارہاہے۔الیکشن کمیشن حکومت کا غلام ادارہ نہیں۔ای وی ایم کا آئیڈیا مسترد کرتے ہیں۔ حکومت کے پاس ووٹنگ مشین پر اٹھنے والے فنی و تکنیکی سوالات کا کوئی جواب نہیں۔ وزراء  کی اداروں کو آگ لگانے، ان کے جہنم میں جانے کی گفتگو ریاست دشمن رویہ ہے۔پاکستان ہمارے آباؤ اجداد کی محنتوں کا لا زوال ثمر ہے۔ قائد اعظم اور علامہ اقبال نے انگریزوں اور ہندوؤں سے آزادی دلائی۔پاکستان کا نظریہ صرف ایک نظریہ ہی نہیں بلکہ اس کا اصل مقصد عملی طور پر اسلامی زندگی کا تصور ہے۔نظریہ پاکستان کا تحفظ کرنا ہر محب وطن مسلمان کے لیے ضروری ہے۔اہل حدیث یوتھ فورس نے اسکا شعور بیدار کرنے کے لیے ٹرین مارچ کا اہتمام کیا ہے جس پر انہیں خراج تحسین پیش کرتا ہوں۔ انہو ں نے کہا کہ جس طرح افغان عوام نے اپنی دینی اور قومی روایات کو برقراررکھا اورپنے نظریات پر سمجھوتہ نہیں کیا،اسی طرح ہمیں بھی مغرب کی ثقافتی یلغار کا مقابلہ کرنا ہو گا۔تب ہی ہم اپنے وطن کی بنیادوں میں شامل لاکھوں شہداء  کے خون سے وفا کرسکتے ہیں۔ نظریہ پاکستان کا تحفظ ہی ملک و قوم کی ترقی اور استحکام کی ضمانت ہے۔پروفیسر ساجد میر نے مزید کہا کہ آزادی ھند میں پانچ لاکھ علماء اھل حدیث کو انگریزوں نے شہید کیا۔انہیں کالا پانی، پھانسی، قتل، جیل، شہر بدری اور نظر بندی وغیرہ کی سزائیں دیں، پنڈت جواہر لال نہرو نے اس بات کا اعتراف کیا تھا کہ ہندوستان کے تمام لوگوں نے آزادی کے لیے جوقربانیاں دی ہیں ان تمام قربانیوں کو ایک پلڑے میں رکھا جائے اور علمائے اہل حدیث صادقپورکے قربانیوں کو دوسرے پلڑے  میں رکھا جائے تو علمائے اہل حدیث صادقپوری کی قربانیاں بہت زیادہ ہیں اہل حدیثو! نظریہ پاکستان کے اصل محافظ تم ہی ہو۔ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کی جدوجہد میں ہزاروں خاندانوں نے لاکھوں جانوں کی قربانیاں پیش کیں۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ آج قوم میں قیام پاکستان والا جذبہ پیدا کیا جائے۔ قوم کو کلمہ طیبہ کی بنیاد پر متحد و بیدار کرنے کی اشد ضرورت ہے۔ لازوال قربانیوں سے حاصل کئے گئے ملک پاکستان کی ترقی اور بقاء  کیلئے طلبہ نوجوانواں اور تمام طبقات کو کردار ادا کرنا ہو گا۔اس موقع پر مرکزی جمعیت اہل حدیث پنجاب کے  جنرل سیکرٹری حافظ یونس آزاد بھی موجود تھے۔ٹرین مارچ میں شریک قیادت رائے ونڈ، کوٹ رادھا کشن، چھانگا مانگا،پتوکی، رینالہ خورد، اوکاڑہ، ساہیوال، چیچہ وطنی، میاں چنوں،خانیوال،ملتان کینٹ، شجاع آباد، لودھراں،بہاولپور، ڈیرہ نواب، لیاقت پور کے مقامات پر منعقدہ استقبالیہ اجتماعات سے خطاب کرے گی۔ٹرین مارچ کی قیادت اہل حدیث یوتھ فورس کے مرکزی صدر حافظ فیصل افضل شیخ، سیکرٹری جنرل حافظ عامر صدیقی، پنجاب کے صدر حافظ سلمان، صوبائی جنرل سیکرٹری حافظ محمد قسیم،جماعت کے مرکزی رہنما  علامہ ابتسام الہی ظہیر،رانا محمد شفیق خاں پسروری، ڈاکٹر عبدالغفور راشد،صاحبزادہ انعام الرحمن یزدانی کررہے ہیں۔مقررین کا کہنا تھا کہ ملک میں بدامنی ختم کر نے میں ریاستی اداروں نے بھر پور کردار ادا کیا ہے۔امریکہ اور اس کے اتحادی مسلمانوں پر ظلم کر رہے ہیں ان کی کوشش ہے اسلامی اقدار کے کو ختم کردیا جائے،امریکہ اور اس کے اتحادیوں کے ہاتھوں سے آج بھی بے گناہ مسلمانوں کا خون ٹپک رہا ہے،امریکہ کو افغانستان سے دینی قوتوں نے بھاگنے پر مجبور کیا۔
پروفیسر ساجد میر 

مزید :

صفحہ آخر -