امریکہ ہر اس ملک پر حملہ نہیں کرسکتا جہاں القاعدہ موجود ہے،بائیڈن 

  امریکہ ہر اس ملک پر حملہ نہیں کرسکتا جہاں القاعدہ موجود ہے،بائیڈن 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


 واشنگٹن (آئی این پی)  امریکی صدر جو بائیڈن  نے کہا  ہے کہ امریکہ ہر اس ملک پر حملہ نہیں کرسکتا جہاں القاعدہ موجود ہے۔ تفصیلات کے مطابق امریکی صدر جو بائیڈن نے افغانستان سے انخلا کے فیصلے کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ اگر افغانستان میں القاعدہ واپس آسکتی ہے تو اسٹریٹجی کیا ہونی چاہیے؟۔جو بائیڈن نے کہا ہے کہ کیا ہر اس جگہ پر حملہ کریں یا فوج رکھیں جہاں القاعدہ موجود ہے؟ امریکہ ہر اس ملک پر حملہ نہیں کرسکتا جہاں القاعدہ موجود ہے، امریکی فورسز القاعدہ کے سربراہ کو مار کر بنیادی ہدف حاصل کر چکی تھیں۔دوسری طرف امریکی ایف بی آئی نے نائن الیون حملوں کی تحقیقات کا پہلا مسودہ جاری کر دیا۔  ایف بی آئی کی تحقیقات کا پہلا مسودہ 16 صفحات پر مشتمل ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ مسودے میں سعودی حکومت کے ہائی جیکرز سے رابطوں کا کوئی ثبوت نہیں ملا۔ غیر ملکی  میڈیا کے مطابق  امریکہ میں سعودی سفارتخانے نے ایف بی آئی تحقیقات کو ڈی کلاسیفائی کرنے کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ نائن الیون میں سعودی حکومت کے ملوث ہونے کا الزام جھوٹ ہے۔ ہائی جیکرز اور امریکہ میں سعودی قونصل حکام کے تعلق پر تحقیقات سامنے لائی گئیں۔ دستاویزات میں ہائی جیکروں کے امریکہ میں سعودی ساتھیوں کے ساتھ رابطوں کی وضاحت کی گئی ہے۔ واضح رہے کہ امریکی صدر جو بائیڈن نے کچھ روز پہلے تحقیقات منظرعام پر لانے کا اعلان کیا تھا۔
بائیڈن

مزید :

صفحہ اول -