نائجیریا، بوکو حرام کے تین الگ الگ حملوں میں 27افراد ہلاک

نائجیریا، بوکو حرام کے تین الگ الگ حملوں میں 27افراد ہلاک

  

 ابوجہ(این این آئی)نائجیریا کی شورش زدہ شمال مشرقی ریاست بورنو میں شدت پسند تنظیم بوکوحرام نے افریقی ملک کیمرون کی سرھد کے قریب تین الگ الگ حملوں میں27افرادکو ہلاک کردیا ،ہلاک ہونے والوں میں چھ اساتذہ بھی شامل ہیں،حملے کے بعد شدت پسندوں نے متعددخواتین کو بھی اغواءکرلیا،فرانسیسی خبررساں ادارے کے مطابق حملے بورنو کے علاقوں دِکاوا اور کالابالگے میں کیے گئے ، دِکاوا بورنو کے قدیم ترین علاقوں میں سے ایک ہے جہاں شدت پسندوں نے پہلے ایک کالج پر دھاوا بول دیا مقامی آبادی کے مطابق شدت پسند متعدد خواتین کو اپنے ساتھ لے گئے، دِکاوا سے ریاستی دارالحکومت مائدوگوری فرار ہونے والے ایک عینی شاہد مود±و کاکاریمی نے بتایا کہ فائرنگ کی آواز سن کر بہت سے لوگوں نے علاقہ چھوڑ دیا، شدت پسندوں نے کالابالگے کے علاقے بھی میں ایک حملہ کیا،مقامی اہلکاروں نے اپنے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ وہاں متعدد گھروں کو نقصان پہنچایا گیا، نائجیریا میں ایک اعلی سرکاری اہلکار نے بتایاکہ ملک کے شمال مشرقی حصوں میں مسلح افراد کی ہاتھوں گزشتہ تین روز کے دوران 135 شہری ہلاک ہو چکے ہیں،بورنو کے اسٹیٹ سینٹر احمد زناح نے کہا کہ یہ ہلاکتیں ریاست کے تین مختلف حصوں میں ہوئیں،نائجیریا حکومت کی امدادی ایجنسی کا کہنا ہے کہ ان حملوں کی وجہ سے تقریبا 2 لاکھ 50 ہزار لوگ اپنا گھر چھوڑنے پر مجبور ہوئے ہیں،نائجیریا کے شمالی مشرقی ریاستوں بورنو، یوبے اور اڈاماوا میں گزشتہ سال سے ایمرجنسی نافذ ہے،ابھی تک نائجیریا کی فوج نے ان حملوں پر کوئی تبصرہ نہیں کیا،انسانی حقوق کی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل کے مطابق شورس کا شکار شمال مشرقی علاقوں میں اس سال اب تک تقریبا 1،500 افراد ہلاک ہو گئے ہیں، ان میں سے تقریبا نصف عام شہری ہیں،تنظیم کے مطابق ہلاکتوں کی بڑھتی ہوئی تعداد کے لیے بوکو حرام کی طرف سے ہونے والے حملوں میں اضافہ اور نائجیریا کی سیکورٹی فورسز کی طرف سے ہونے والی بدلے کی کارروائی کو ذمہ دار ہے۔

مزید :

عالمی منظر -