مصری فوج کا ایڈز اور ہیپاٹائٹس کے علاج میں انقلابی پیش رفت کا دعویٰ

مصری فوج کا ایڈز اور ہیپاٹائٹس کے علاج میں انقلابی پیش رفت کا دعویٰ

  

 قاہرہ (این این آئی)مصری فوج نے ایڈز کے علاج میں انقلابی پیش رفت کا دعویٰ کردیا ۔مصری فوج کے فزیشن میجر جنرل ابراہیم عبدل اتی نے گذشتہ ہفتے ایک پریس کانفرنس کے دوران بتایا کہ مصر کی انٹیلی جنس سروس کے تحت پچھلے بائیس سال سے ایک خفیہ طبی تحقیقی پروجیکٹ پر کام جاری تھا جو اب پایہ تکمیل کو پہنچ چکا ہے، اور اس پروجیکٹ سے حاصل ہونے والے نتائج ایڈز اور ہیپاٹائٹس کے علاج میں انقلابی ثابت ہوں گے۔پریس کانفرنس کے دوران ذرائع ابلاغ کے نمایندوں کو ایک ویڈیو فوٹیج دکھائی گئی جس میں مریض بستروں پر لیٹے نظر آرہے تھے۔ مختلف مشینوں سے متعدد تار نکل کر ان کے جسموں سے منسلک تھے۔ ویڈیو میں وہ ڈیوائس بھی دکھائی گئی جو مصری فوجی محققین کی بائیس سالہ کاوش کا نتیجہ تھی۔ میجرجنرل ابراہیم کے مطابق یہ ڈیوائس ایک بم ڈٹیکٹر سے متاثر ہوکر تخلیق کی گئی ہے جس سے ایک اینٹینا بھی منسلک ہے۔ جنرل کے مطابق یہ ڈیوائس چند فٹ کے فاصلے سے کسی مریض میں جگر کے امراض کی نشان دہی کرسکتی ہے۔فوج کے مطابق اس نوع کی دو ڈیوائسز تیار کی گئی ہیں جو C-Fast اور I-Fastکہلاتی ہیں۔ یہ ڈیوائسز برقی مقناطیسی لہروں کی مدد سے ہیپاٹائٹس سی اور ایڈز کے وائرس کا سراغ لگاتی ہیں۔ مصر کی وزارت دفاع نے ورلڈ انٹیلکچوئل پراپرٹی آرگنائزیشن کے پاس اپنی ایجاد کو پیٹنٹ کرانے کے لیے درخواست بھی دائر کردی ہے۔

مزید :

عالمی منظر -