گذشتہ برس پنجاب میں چاول کی اوسط پیداوار20.56من فی ایکڑ رہی

گذشتہ برس پنجاب میں چاول کی اوسط پیداوار20.56من فی ایکڑ رہی

  

           راولپنڈی(اے پی پی)زرعی ماہرین نے کہا ہے کہ چاول ہماری غذائی ضروریات پوری کرنے کے ساتھ ساتھ زرمبادلہ کمانے کا ذریعہ بھی ہے تاہم چاول کی پیداوار میں اضافے کے لیے جدید رجحانات کا استعمال ضروری ہے ۔ سال 2012-13ءکے دوران صوبہ پنجاب میں 42لاکھ 29ہزار ایکڑ رقبہ دھان کے زیر کاشت لایا گیا جس سے 34لاکھ 78ہزار ٹن چاول کی پیداوار حاصل ہو ئی ہے۔ اس طرح گذشتہ برس پنجاب میں چاول کی اوسط پیداوار20.56من فی ایکڑ رہی۔دوسری جانب جدید ٹیکنالوجی سے استفادہ کرنے والے ترقی پسند کاشتکار باسمتی اقسام سے 60من اور اری اقسام سے 80من فی ایکڑ پیداوار حاصل کر رہے ہیں ۔پیداوار کے اس فرق کو کم کرنے کے لیے دھان کی جدید پیداواری ٹیکنالوجی پر عمل کرنا انتہائی ضروری ہے ۔دھان کی فصل سے اچھی پیداوار کے حصول کے لئے اثرانداز کئی عوامل میں سے بیماریوں پر کنٹرول حاصل کرنا نہایت اہم ہے ۔ اگر ان بیماریوں کا بروقت تدارک نہ کیا جائے تو یہ پیداوار میں بہت بڑی کمی کا سبب بنتی ہیں۔

مزید :

کامرس -