طالبان کو جنگ بندی کے بعد دوسرے راستے کا انتخاب نہیں کرنا چاہیے،لیاقت بلوچ

طالبان کو جنگ بندی کے بعد دوسرے راستے کا انتخاب نہیں کرنا چاہیے،لیاقت بلوچ

  

           لاہور(سٹاف رپورٹر)سیکرٹری جنرل جماعت اسلامی پاکستان لیاقت بلوچ نے کہاہے کہ طالبان کو جنگ بندی کے بعد کسی دوسرے راستے کا انتخاب نہیں کرنا چاہیے۔ فریقین انا اور ہٹ دھرمی چھوڑ کر ملکی سلامتی اور امن کے لیے کوششوں کو جاری رکھیں ۔ عوام اور فوج کے درمیان نفرتیں پیدا کر کے انہیں باہم دست و گریبان کرنا اسلام و پاکستان دشمنوں کا ایجنڈا ہے ۔ فوج اور حکومت کے درمیان اختلافات تشویشناک ہیں۔ امریکہ افغانستان میں پٹ گیاہے ، نہتے افغانوںنے اس کے غرور کو خاک میں ملادیاہے۔2014-15 ءدنیا بھر اور خاص طور پر عالم اسلام کے لیے انتہائی اہمیت کا حامل ہے ۔امریکہ خطے میں بھارت کی بالادستی کے لیے جوسازشیں کر رہاتھا ، وہ ناکامی سے دوچار ہوں گی ۔جماعت اسلامی ملی یکجہتی اور قومی اتحاد کے لیے کوششیں جاری رکھے گی ۔ 15 اپریل کو اسلام آباد میں عالمی اتحاد امت کانفرنس منعقد کی جائے گی جس میں فلسطین ، سعودی عرب ، مصر سمیت عالم اسلام سے نامور سکالرز شریک ہوں گے اور مختلف مکاتب فکر کے درمیان ہم آہنگی پیدا کرنے کے لیے اتحاد امت کی اہمیت پر زوردیں گے ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعیت اتحاد العلما اور علما اکیڈمی کے زیراہتمام علما اکیڈمی میں ”آج کا اسلام اور امت مسلمہ کو درپیش مسائل “ کے موضوع پر منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ سیمینار سے ڈائریکٹر امور خارجہ جماعت اسلامی عبدالغفار عزیز ،ڈپٹی سیکرٹری جنرل ڈاکٹر فرید احمد پراچہ ، مولانا مختار احمد سواتی ، قاری محمد سعید اور مولانا لطیف الرحمن نے بھی خطاب کیا ۔ لیاقت بلوچ 

مزید :

صفحہ آخر -