افغان شہریوں کوڈی پورٹ کرنے سے متعلق وفاقی حکومت سے تحریری طور پر پالیسی طلب

افغان شہریوں کوڈی پورٹ کرنے سے متعلق وفاقی حکومت سے تحریری طور پر پالیسی طلب

لاہور (نامہ نگار خصوصی ) لاہور ہائیکورٹ نے افغان شہریوں کو افغانستان ڈی پورٹ کرنے سے متعلق وفاقی حکومت سے تحریری طور پر پالیسی طلب کر لی ۔مسٹر جسٹس سردار طارق مسعود نے فارنر ایکٹ کے تحت گرفتار نادر خان سمیت 5افغان شہریوں کی ضمانت کی درخواستوں پر سماعت کی، درخواست گزاروں کے وکلا ء نے موقف اختیار کیا کہ پولیس اور قانون نافذ کرنے والے دیگر ادارے فارنر ایکٹ کے تحت ایسے تمام افغان شہریوں کو گرفتار کر کے جیلوں میں ڈال رہے ہیں جن کا پاکستانی شناختی کارڈ نہیں بنا ہوا اور نہ ہی ان کے پاس مہاجر کا رڈ ہیں، انہوں نے استدعا کی فارن ایکٹ کے تحت گرفتار افغان شہریوں کو ضمانتوں پر رہا کیا جائے اور واپس افغانستان ڈی پورٹ کیا جائے، پراسکیوشن کی طرف سے عدالت کو بتایا گیا کہ تمام ملزم غیر ملکی ہیں اور وہ غیرقانونی طور پر پاکستان میں رہ رہے تھے، عدالت نے دونوں طرف سے دلائل سننے کے بعد مزید سماعت 27اپریل تک ملتوی کرتے ہوئے اٹارنی جنرل کو حکم دیا کہ بتایا جائے کہ پاکستان میں غیرقانونی طور پر مقیم افغان شہریوں کو ڈی پورٹ کرنے یا نہ کرنے سے متعلق وفاقی حکومت اور وزارت خارجہ کی پالیسی کیا ہے؟۔ پالیسی طلب

مزید : صفحہ آخر


loading...