طالب علموں کو تشدد کا نشانہ بنانے اور پیار کی بجائے مار پر عمل درآمد کیخلاف دائر درخواست پر سیکرٹری تعلیم پنجاب کو نوٹس

طالب علموں کو تشدد کا نشانہ بنانے اور پیار کی بجائے مار پر عمل درآمد کیخلاف ...

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے تعلیمی اداروں میں طالب علموں کو تشدد کا نشانہ بنانے اور پیار کی بجائے مار پر عمل درآمد کے خلاف دائر درخواست پر سیکرٹری تعلیم پنجاب کو نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کر لیاہے۔ عدالت کے روبرو درخواست گزار محمد افضل وغیرہ کی جانب سے موقف اختیار کیا گیا کہ حکومت پنجاب نے 2005ء میں سکولوں اور تعلیمی اداروں میں مار نہیں پیار کی پالیسی پر عمل درآمد کا حکم دیا۔انہوں نے بتایا کہ حکومتی پالیسی کے برعکس طالبعلموں سے تعلیمی اداروں میں جانوروں جیسا سلوک کیا جا تا ہے جس سے طالب علم نفسیاتی اور ذہنی مریض بن رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ مار کھانے والے طالبعلم تعلیم سے نفرت کرنا شروع ہو چکے ہیں جس کی وجہ سے سکول سے بھاگنے والے طالبعلموں کی تعداد میں کمی کی بجائے اضافہ ہو رہا ہے۔انہوں نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ طالبعلموں پر تشدد سے ان کی صلاحتیں زنگ آلود ہو جاتی ہیں جبکہ تعلیم سے نفرت طالبعلموں کو تعلیم یافتہ بنانے کی بجائے جرائم کی جانب گامزن کر رہی ہے جو معاشرے کو تباہ کرنے کے مترادف ہے جس پر عدالت نے سیکرٹری سکولز پنجاب کو نوٹس جاری کرتے ہوئے 13مئی کو جواب طلب کرلیا ہے۔

مزید : صفحہ آخر