سرمایہ کار کی جانب سے اڑھائی لاکھ ڈالرز کی سیڈ فنڈنگ کا اعلان

سرمایہ کار کی جانب سے اڑھائی لاکھ ڈالرز کی سیڈ فنڈنگ کا اعلان

  

کراچی(پ ر) انٹرنیشنل انویسٹرز پر مشتمل ادارے، سرمایہ کار کی جانب سے پاکستان میں فارما سیوٹیکل سیکتر کی ادویات کی سیریلائزیشن کا کام کرنے والے سٹارٹ اپ، پرو چیک کے لیے اڑھائی لاکھ ڈالرز سیڈ فنڈنگ کا اعلان کیا گیا ہے۔ اس فنڈنگ کے ذریعے پروچیک کو بڑھتی ہوئی ڈیمانڈ کے پیش نظر اپنی سیلز اور انجنئیرنگ ٹیم کو برھانے میں مدد ملے گی۔ اس کے علاوہ یہ فنڈنگ کراچی کے علاوہ بھی ادویات کی مینوفیکچرنگ والے شہروں میں سیلز اینڈ سروس سنٹرز قائم کیے جائیں گے۔ اس فنڈنگ کے معاہدے کے تحت سرمایہ کار کے چیف ایگزیکٹو آفیسر، رابیل وڑائچ اب پرو چیک بورڈ آف ڈائریکٹرز کا حصہ ہونگے۔ اس موقع پر بات کرتے ہوئے سرمایہ کار کے چیف ایگزیکٹو آفیسر، رابیل وڑائچ کا کہنا تھا کہ اپنی ایس ایم ایس، ایپلیکیشن پر مشتمل سروسز کے باعث پرو چیک پاکستان کی فارماسیوٹیکل انڈسٹری کی اولین چوائس بن چکا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پرو چیک کی قابل اعتبار اور موزوں ترین سروسز کی بدولت ادویات بنانے والوں کے پنجاب حکومت کے ٹینڈرز اور ڈراپ کے قواعدو ضوابط پر پورا اترنے مین مدد ملے گی۔ اس پارٹنرشپ پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے رابیل وڑائچ کا کہنا تھا کہ سرمایہ کار پر امید ہے کہ پرو چیک اپنی بہترین سروسز کے ذریعے علی ادویات کے کاروبار کو مزد برھنے سے روکنے میں مدد دے گا۔ اس موقع پر پرو چیک کے بانی اور سی ای او، صائم صدیقی کا کہنا تھا کہ ہماری کوشش ہے کہ سپلائی چین کو محفوظ بنا کرہ مریضوں تک اصلی اور معیاری ادویات کی فراہمی یقینی بنائی جا سکے۔ انہوں نے مزید کہا کہ صحت کے شعبے میں وسیع تجربہ رکھنے والے اس ادارے سرمایہ کار کے ساتھ شراکت سے مارکیٹ میں برانڈ پروٹیکشن اور سیریلائزیشن مین ہماری پوزیشن مزید مظبوط ہوگی۔ گزشتہ کچھ برسوں سے پوری دنیا میں مریضوں تک معیاری ادویات کی فراہمی کو یقینی بنانے کے لییع سیریلائزیشن کی اہمیت پر زور دیا جا رہا ہے۔ اس عمل میں ہر دوائی پر ایک خاص کوڈ موجود ہوتا ہے جس کو استعمال کر کے مریض اور ریگولیٹری باڈیز یہ چیک کر سکیں گے کہ دوائی اصلی ہے یا نہیں۔ پاکستان میں پنجاب حکومت اور ڈرگ ریگولیٹرے اتھارٹی کی جانب سے سیریلائزیشن کو لازمی قرار دینے کے لیے ڈرافٹ تیار کیا جا چکا ہے۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -