آفریدی کی کراچی کنگز میں شمولیت، پی سی بی نے ایک بار پھر ایسا اعلان کر دیا کہ جاوید آفریدی کی خوشی کی انتہاءنہ رہے گی ، شاہد آفریدی اور سلمان اقبال ایک دوسرے کا منہ دیکھتے رہ گئے کیونکہ۔۔۔

آفریدی کی کراچی کنگز میں شمولیت، پی سی بی نے ایک بار پھر ایسا اعلان کر دیا کہ ...
آفریدی کی کراچی کنگز میں شمولیت، پی سی بی نے ایک بار پھر ایسا اعلان کر دیا کہ جاوید آفریدی کی خوشی کی انتہاءنہ رہے گی ، شاہد آفریدی اور سلمان اقبال ایک دوسرے کا منہ دیکھتے رہ گئے کیونکہ۔۔۔

  

کراچی (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) نے شاہد خان آفریدی اور پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) فرنچائز کراچی کنگز کے درمیان معاہدے پر دونوں کو ایک بار پھر وارننگ جاری کر دی ہے اور اس کے ساتھ ہی کسی بھی کھلاڑی کی دوسری ٹیم میں شمولیت سے متعلق قواعد و ضوابط بھی جاری کر دئیے ہیں۔

ٹروکالر کی نئی ایپلیکیشن متعارف، گوگل ڈو کیساتھ انضمام کا بھی اعلان

تفصیلات کے مطابق پی سی بی کی جانب سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کسی بھی کھلاڑی کو ٹیم میں شامل کرنے، کسی کھلاڑی کے اس کی اپنی ٹیم میں برقرار رہنے اور کسی نئے کھلاڑی کو ٹیم میں شامل کرنے سے متعلق قوانین کی وضاحت کی گئی ہے اور اس کے مطابق شاہد آفریدی قانونی طور پر اب بھی پشاور زلمی کی ”ملکیت“ ہیں۔

پی سی بی کے بیان میں کہا گیا ہے کہ ”پی ایس ایل ٹیمیں ایک خاص وقت میں ہی کوئی نیا کھلاڑی منتخب کر سکتی ہیں یا کسی دوسری ٹیم کے کھلاڑی کو اپنی ٹیم میں شامل کر سکتی ہیں اور کسی کھلاڑی کے ساتھ معاہدہ ختم کر سکتی ہیں۔“

پی سی بی کے مطابق کراچی کنگز صرف جون میں ٹرانسفر ونڈو کے بعد ہی شاہد آفریدی کو اپنی ٹیم میں شامل کر سکتی ہے۔ پی سی بی کے مطابق ”پی ایس ایل کھیلنے والے تمام کھلاڑیوں کا معاہدہ اگلے ڈرافٹ سے پہلے یا کھلاڑی کو برقرار رکھنے کی ونڈو پر ختم ہو گا، جو بھی پہلے آ جائے۔“

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

پی سی بی کا کہنا ہے کہ ”یہ معاہدہ تین فریقین کے درمیان یعنی کھلاڑیوں، فرنچائز اور پی سی بی کے درمیان ہوتا ہے اور اس خاتمے کا اعلان پی سی بی کے علاوہ کوئی بھی نہیں کر سکتا، اور ایسا صرف باہمی رضامندی اور ٹرانسفر یا دوبارہ منتخب کرنے کے وقت ہی کیا جا سکتا ہے۔ آفیشل طورپر اعلان کردہ ونڈو کے علاوہ کسی بھی کھلاڑی کی منتقلی کا اعلان نہیں کیا جا سکتا۔ اور توقع کی جاتی ہے کہ تمام کھلاڑی، ٹیمیں ، انتظامیہ اور ٹیموں کے مالکان کسی بھی چیز سے مستثنیٰ ہو کر ان قوانین کی پاسداری کریں گے۔ “

مزید :

کھیل -