صوبائی دارالحکومت تعلیمی تنزلی کا شکار ،7سے 27ویں نمبر پر آگیا

صوبائی دارالحکومت تعلیمی تنزلی کا شکار ،7سے 27ویں نمبر پر آگیا

لاہور (حافظ عمران انور) انتظامی نااہلی یا اساتذہ کا احتجاج، صوبائی دارالحکومت لاہور تعلیمی میدان میں پھر پیچھے رہ گیا۔ تعلیمی کارکردگی میں لاہور 27 ویں نمبر پر آ گیا۔ تین ماہ قبل تعلیمی درجہ بندی میں لاہور کی ساتویں پوزیشن تھی۔ پروگرام مانیٹرنگ اینڈ امپلیمنٹیشن یونٹ پنجاب نے تمام 36 اضلاع کی تعلیمی کارکردگی کی مانیٹرنگ رپورٹ جاری کر دی۔ تفصیلات کے مطابق محکمہ تعلیم حکام کے دعوؤں کے برعکس صوبہ پنجاب میں تعلیمی کارکردگی نہ ہونے کے برابر رہ گئی ہے۔ پنجاب حکومت کے ادارے پی ایم آئی یو نے پنجاب کے تمام 36 اضلاع کی تعلیمی کارکردگی کے حوالے سے ایک رپورٹ جاری کی ہے جس میں لاہور تعلیمی کارکردگی کے حوالے سے بدترین صورت حال سے دوچار ہے۔ تعلیمی کارکردگی کے حوالے سے لاہور پچھلے تین ماہ میں بجائے آگے بڑھنے کے مزید تنزلی کی طرف رواں دواں ہے جس کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ تین ماہ قبل پی ایم آئی یو کی جانب سے جاری کی گئی رپورٹ میں لاہور 7 ویں پوزیشن پر تھا جب کہ موجودہ جاری کی گئی رپورٹ میں اب لاہور مزید تنزلی کے ساتھ 27 ویں نمبر پر آ گیا ہے۔ واضح رہے کہ اساتذہ کی طرف سے آئے روز اپنے مطالبات کے حق کے لئے سڑکوں پر احتجاج اور لاہور تعلیمی بورڈ کی جانب سے امتحانی ڈیوٹیوں کی وجہ سے بھی سکولوں میں طلباء کی پڑھائی شدید متاثر ہوتی ہے جس کی وجہ سے تعلیمی درجہ بندی کے حوالے سے لاہور ترقی کی بجائے تنزلی کی طرف گامزن ہے۔ پی ایم آئی یو کی جانب سے جاری کی گئی رپورٹ کے مطابق تعلیمی کارکردگی کے لحاظ سے اوکاڑہ پہلے نمبر پر آ گیا ہے، بھکر دوسرے، سرگودھا تیسرے، لہ چوتھے، خانیوال پانچویں، ٹوبہ ٹیک سنگھ چھٹے، ساہیوال ساتویں، پاکپتن آٹھویں، اٹک نویں اور چکوال دسویں پوزیشن پر آ گیا ہے۔ ضلع لاہور کی بدترین تعلیمی کارکردگی کے حوالے سے لاہور کے چیف ایگزیکٹو آفیسر ایجوکیشن زاہد بشیر گورائیہ سے جب رابطہ کیا گیا تو بارہا کال کرنے کے باوجود ان سے رابطہ نہ ہو سکا۔

مزید : میٹروپولیٹن 1