ہم کورٹ آف لاء ہیں کورٹ آف جسٹس نہیں ‘ شاہد بلال حسن

ہم کورٹ آف لاء ہیں کورٹ آف جسٹس نہیں ‘ شاہد بلال حسن

خانیوال (بیورو نیوز)لاہور ہائی کورٹ بہاولپوربنچ کے جسٹس شاہد بلال حسن نے کہا ہے کہ ہم کورٹ آف لاء ہیں کورٹ آف جسٹس نہیں ۔ہم نے فیصلے قانون کے مطابق کرنے ہوتے ہیں قانون کے دائرے سے باہر نکل کر نہیں کئے جا سکتے لہذاٰ وکلاء بالخصوس جونئر وکلاء عبوری (بقیہ نمبر29صفحہ12پر )

ریلیف کا تقاضا کرنے کی بجائے قانون کی کتابوں سے دوستی کریں ۔اسے پڑھیں اور سمجھیں اور پھر عدالتوں میں پیش ہوا کریں ۔یہ بات انہوں نے ڈسٹرکٹ با روم خانیوال میں وکلاء سے خطاب کرتے ہوئے کہی ۔ انہوں نے کہا کہ اللہ گواہ ہے کہ میں نے یہ مرتبہ محنت اور لگن سے حاصل کیا ہے ۔چنانچہ جونئر وکلاء بھی اپنے اندر محنت اور لگن کا جذبہ پیدا کریں انشاء اللہ کامیابی آپ کے قدموں میں ہوگی میراتعلق کسی بڑے خاندان سے نہیں ہے اور نہ ہی میری پشت پر کسی بڑے کا ہاتھ ہے میں ایک غریب اور محنت کش کا بیٹا ہوں تاہم مجھ پر اللہ کا خاص کرم ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ میں سارے فیصلے قانون کی روشنی میں اللہ کو حاضر ناضر جان کر کرتا ہوں ۔میری جائیداد میرے والدین ہیں اور سنگل آفس روم ہے اس کے علاوہ میری کوئی پراپرٹی نہیں ہے ۔اور نمازفجرکی ادائیگی کے بعد بارگاہ الہیٰ میں بس یہی دعا مانگتا ہوں کہ مجھ سے ایسے فیصلے کروانا کہ جس سے میری آخرت سنور سکے۔ا نہوں نے ڈسٹرکٹ بار کے صدر محمد اجمل خان بھٹہ ایڈووکیٹ کی جانب سے وکلاء کو درپیش مسائل پر مبنی سپاس نامہ کا جواب دیتے ہوئے یقین دلایا کہ انشاء اللہ مسائل کا ازالہ مہینوں اور سالوں کی بجائے چند ہفتوں میں کر دیا جائے گا ۔اس تقریب سے جنرل سیکریٹری چوہدری کلیم ارشد ایڈووکیٹ ۔رانا لیاقت علی اور الطاف حسین بھٹی نے بھی اظہار خیال کیا ۔شرکاء میں ڈسٹرکٹ اینڈسیشن جج خانیوال جاوید الحسن چشتی ۔ایڈیشنل سیشن ججز غلام عباس سیال ، اظہارالحق علوی ، رانا محمد سہیل خان ، فرحت جبیں ، محمد انورہرل ، جاوید ہاشمی ایڈووکیٹ ممبر جوڈیشل کمیشن پاکستان ، عزیز خان پنیاں ممبر پنجاب بار کونسل ، ملک محمد طارق نوناری سابق صدر با رخانیوال ،رانا محمد اسلم سابق صدر بارسمیت جملہ جوڈیشل افسران قابل ذکر ہیں ۔ یہاں یہ امر بھی قابل ذکر ہے کہ جب مہمان خصوصی کا استقبال بار روم آمد پر ڈسٹرکٹ بار کے عہدیداران نے کیا تو مسٹرجسٹس شاہد بلال حسن نے پنجاب بار کونسل کے ممبر جاوید ہاشمی ایڈووکیٹ اور پیر احمد شاہ کھگہ کووکلاء کے جم غفیر سے ڈھونڈکربغل گیرہوئے اور کہا کہ وکلاء کی سیاست میں میرے لیڈر زرہے ہیں ۔اور ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج خانیوال جاوید الحسن چشتی کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ میرا ان سے روحانی تعلق ہے اور عقیدت مندی ہے اور ایسے ہی نیک بندوں کی وجہ سے مجھ پر اللہ کا خاص کرم ہے میں باقاعدگی سے بابا فرید شکر گنج اور داتا دربار پر حاضری دیتا ہوں قبل ازیں جوڈیشل افسران سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اپنے ذاتی مفادات سے بالاتر ہوکر کیسزکونمٹائیں کیونکہ ہم سب کے پاس جو اختیار ہے وہ اللہ کی طرف سے امانت ہے اور امانت میں خیانت میرے نزدیک سنگین جرم ہے ۔انہوں نے کہا کہ 1997 ء سے لاہورکی سول عدالت میں میرے والدکا ایک کیس زیرسماعت چلا آرہا ہے لیکن میں اپنے پروردگارگواہ ٹھہرا کرکہتا ہوں کہ میں نے اپنے منصب کا ناجائز استعمال نہیں کیا اور جس دن مجھ سے ایسی غلطی سرزد ہوگئی تو وہ دن جوڈیشری میں آخری دن ہوگا ۔آخر میں لاہور ہائی کورٹ بہاولپور بنچ کے جسٹس شاہد بلال حسن نے جوڈیشری کے لئے جیمنیزیم کا افتتاح کیا اس موقع پر صحافیوں سے گفتگوکرتے ہوئے کہا کہ صحافی جوڈیشری فیملی کا اہم ترین حصہ ہے لو کہ ملک و قوم کی مسیحائی کاکردار ادا کر رہا ہے ۔انہوں نے مصالحتی مرکز اور ایڈیشنل سیشن جج غلام عباس سیا ل کی عدالت کا معائنہ کیا اور سٹاف سے ملاقات کے دوران مسائل دریافت کئے ۔

مزید : ملتان صفحہ آخر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...