فرد واحد کو بچانے کیلئے آئینی ترمیم نہیں کرنے دینگے: شاہ محمود قریشی

فرد واحد کو بچانے کیلئے آئینی ترمیم نہیں کرنے دینگے: شاہ محمود قریشی

ملتان (نیوز رپورٹر )پاکستان تحریک ا نصاف کے مرکزی وائس چیئرمین مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ کا فیصلہ تاریخی نوعیت کا ہے شہید ذوالفقار علی بھٹو اور اس فیصلے میں فرق ہے حکومت کی جانب سے 62 ون ایف میں ترمیم حماقت ہوگی ایک شخص کے لئے قانون میں ترمیم کی گئی تو بھرپور تحریک چلائیں گے ان عناصر کو تنقید کا نشانہ بنایا جنہوں نے عدالتوں کا مذاق اڑایا جنوبی پنجاب کا مطالبہ مضبو ط ہے یہی وجہ ہے کہ وزیراعلی بلوچستان نے بھی جنو بی پنجاب صوبے کی تائید کی ہے جہانگیرخان ترین کی پارٹی کے لیے بہت خدمات ہیں جہانگیر ترین کے فیصلے سے پارٹی کو ضرور نقصان ہوا ہے مگر ہمیں اسے تسلیم کرنا ہوگا ہماری ٹرین کا انجن سلامت ہے جبکہ (ن) لیگ کا انجن پٹری سے اتر گیا ان خیالات کا اظہار انہوں نے حالیہ دنوں گلگشت کالونی میں مسلح افراد کی فائرنگ سے شہید ہونے والے عالم شیر کے والد حاجی اعجاز سیال سے ان کی رہائش گاہ پر اظہار تعزیت کے بعد میڈیا سے بات چیت میں کیا اور شہید کے درجات کی بلندی اور پسماندگان کے لئے صبر جمیل کی دعا کی اور عالم شیر کے قتل میں ملوث ذمہ داروں کو کیفر کردار تک پہنچانے کا مطالبہ کیا اور کہا کہ نوجوان عالم شیر کا بے گناہ قتل ہوا ان کے ورثاء کو انصاف ملنا چاہیئے مخدوم شاہ محمود قریشی نے مزید کہا کہ جنوبی پنجاب کی محرومیاں بڑھتی جارہی ہیں دریاؤں کے حساب سے دیکھیں تو جنو بی پنجاب بھی محروم ہے جنوبی پنجاب صوبہ آج کا مسئلہ نہیں ہے 30، 35 سال سے ہے لوگ پانی، صحت، تعلیم اور سیوریج کا نظام بہتر چاہتے ہیں تحریک انصاف الگ صوبے کے موقف کی تائید کر رہی ہے جنوبی پنجاب صوبہ روکنے کے لیے ن لیگ نے بہاولپور صوبہ کا شوشا چھوڑ دیا انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) نے جذبات میں جو فیصلے کئے وہ الٹے ثابت ہو ئے انہوں نے کہا کہ اگر قوم نے ہم پر اعتماد کیا بلے پر مہر لگائی تو ہم عوام کی ترقی کے لیے کام کریں گے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ نگران وزیر اعظم کے حوالے سے وزیراعظم سواور خورشید شاہ کی ملاقات ہوئی ہے اور : ملاقات میں طے ہوا ہے کہ ایک دوسرے سے مشاورت کر رہے ہیں تاہم ابھی کوئی نام طے نہیں ہواانہوں نے کہا کہ عدالتی فیصلے کے بعد جہانگیر ترین کو پارٹی عہدے سے ہٹا دیا ہے انہوں نے کہا کہ نواز شریف نے خود کو سیاسی طور پر زندہ رکھنے کے لئے بیانیہ بنایان لیگ میں بادشاہ لوگ ہیں کچھ بھی کہہ دیتے ہیں ن لیگ کو نہ چاہتے ہوئے بھی اس فیصلے کو تسلیم کرنا ہوگا انہوں نے کہا کہ ن لیگ کو فیصلہ پسند نہیں آیا ہوگا نوازشریف ان کے لیڈر تھے ن لیگ کو آگے بڑھنا ہوگا، ابھی بھی ان کی اکثریت ہے گر ابھی بھی وہ ایسے ہی بیانات دیں گے تو ان کے مزید ایم این ایز ان کا ساتھ چھوڑ دیں گے انہوں نے کہا کہ الگ صوبہ کی تحریک ایک عرصے سے چل رہی ہے یہ کوئی نئی نہیں ہے جنو بی پنجاب کے عوام کو ان کا حق ملنا چاہیئے ۔

مزید : کراچی صفحہ اول