چارسدہ میں 2ڈاکٹروں کیخلاف قتل خطا کے مقدمات درج کرنے کیخلاف ہڑتال

چارسدہ میں 2ڈاکٹروں کیخلاف قتل خطا کے مقدمات درج کرنے کیخلاف ہڑتال

چارسدہ (بیورو رپورٹ) چارسدہ ہسپتال کے د و ڈاکٹروں کے خلاف قتل خطا ء کے مقدمات درج کرنے کے خلاف چارسدہ ہسپتال میں مکمل ہڑتال ۔او پی ڈی بند ، اپریشن ملتوی کر دئیے گئے ۔ہیلتھ کوآرڈنیشن کونسل نے ایف آئی آر واپس لینے ، ہسپتال کے املاک کو نقصان پہنچانے میں ملوث عناصر کے خلاف ایف آئی آر در ج کرنے اور ہسپتال کی سیکورٹی ایف سی کے حوالے کرنے تک ہڑتال جاری رکھنے کا اعلان کر دیا ۔ تین روز کی ڈیڈ لائن ۔ مطالبات منظور نہ کئے گئے تو ایمر جنسی سروس بند کرکے پورے صوبے میں ہڑتال کی کال دی جائیگی ۔ ڈاکٹر ایسو سی ایشن کی پریس کانفرنس ۔ تفصیلات کے مطابق جمعرات کے روز ٹریفک خادثے میں زخمی ہونے والے 18سالہ نوجوان شفیع اللہ کی ہسپتال میں فوتگی پر ڈاکٹروں کے خلاف قتل خطاء کے مقدمات درج کرنے کے خلاف ڈسٹرکٹ ہیڈ کوآرٹر ہسپتال چارسدہ میں ہیلتھ کوآرڈنیشن کونسل کی کال پر مکمل ہڑتال کی گئی جس میں ڈاکٹروں کے علاوہ پیرا میڈیکل ایسو سی ایشن اور نرسنگ سٹاف نے بھی حصہ لیا ۔ ہڑتال کی وجہ سے مریضوں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا جبکہ درجنوں اپریشن بھی ملتوی کر دئیے گئے ۔ مریضوں کے لواحقین سراپا احتجاج بن گئے اور آئے روز ڈاکٹروں کی ہڑتال کو بلا جواز قرار دیکر صوبائی حکومت سے ڈاکٹروں کے جائز مطالبات پوری کرنے کا مطالبہ کیا ۔ دوسری طرف ہیلتھ کوآرڈنیشن کونسل کے زیر اہتمام ڈاکٹر ایسو سی ایشن اور ینگ ڈاکٹر ایسو سی ایشن کا ہنگامی اجلاس منعقد ہو اجس میں ایسو سی ایشن کے صوبائی قائدین نے بھی شرکت کی ۔ اجلاس کے بعد میڈیا کو تفصیلات بتاتے ہوئے ینگ ڈاکٹر ایسو سی ایشن کے چےئرمین ڈاکٹر خان شاہ اور سینئر نائب صدر ڈاکٹر اعجا ز رحیم نے کہا کہ نوجوان شفیع اللہ کی موت پر ہسپتا ل انتظامیہ کو بھی افسوس ہے مگر زندگی اور موت اللہ کے ہاتھ میں ہے ۔ مجروح شفیع اللہ کو ہسپتال لایا گیا تو ڈیوٹی پر موجود ڈاکٹروں نے ان کا فوری معائنہ کر کے ڈریسنگ کی اور ایکسرے تجویز کئے۔ ایکسرے کے بعد مجروح شفیع اللہ کی موت واقعہ ہو گئی ۔انہوں نے واضح کیا کہ لواحقین کے ہاتھوں میں موجود ایکسرے اس بات کی دلیل ہے کہ ڈاکٹروں نے مرحوم شفیع اللہ کا معائنہ کیا تھا ۔ انہوں نے کہاکہ بعض عناصر نے مرحوم شفیع اللہ کے لواحقین کو احتجاج پر اکسا یا اور متوفی کی موت کی ذمہ داری ڈاکٹروں پر ڈال دی جو سراسر غلط ہے ۔ انہوں نے کہاکہ مشتغل مظاہرین نے ہسپتال کے املاک کو نقصان پہنچایا اور ڈاکٹروں کو سنگین نتائج کی دھمکیاں دی ۔ انہوں نے مزید کہا کہ واقعہ کے حوالے سے بغیر کسی انکوائری کے ایف آئی آر کا اندراج سمجھ سے بالا تر ہے ۔ انہوں نے واشگاف الفاظ میں کہا کہ ڈاکٹروں کی غفلت اور لاپر واہی ثابت ہو ئی تو وہ کسی صورت ان کو سپورٹ نہیں کرینگے ۔انہوں نے ہسپتال پر منفی سیاست اور صحافت سے اجتناب کرنے کی اپیل کی اور سیاسی قائدین اور صحافی حضرات سے چارسدہ ہسپتال کے بہتری کیلئے ہسپتال انتظامیہ سے مل بیٹھ کر جامع اور مثبت اقدامات کی اپیل کی ۔انہوں نے مزید تین روز تک ہڑتال جاری رکھنے کا اعلان کر تے ہوئے واضح کیا کہ تین روز کے اندر اندر دونوں ڈاکٹروں کے خلاف درج ایف آئی آر واپس لینے ، ہسپتال میں ایف سی تعینات کرنے اور ہسپتال کے املاک کو نقصان پہنچانے والے عناصر کے خلاف ایف آئی آر درج کرنے کا مطالبہ کیا بصورت دیگر تین دن کے بعد ایمر جنسی سروس بھی بند کرنے اور ہڑتال کا دائرہ پورے صوبے تک پھیلانے کی دھمکی دی ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...