سندھ اسمبلی : ارکان کا تاخیر سے ایوان میں آنے کا سلسلہ جاری

سندھ اسمبلی : ارکان کا تاخیر سے ایوان میں آنے کا سلسلہ جاری

کراچی (اسٹاف رپورٹر ) سندھ اسمبلی کا اجلاس جمعہ کوپرانی بلڈنگ میں ہو ا۔ایوان میں مقررہ وقت پر پہنچنے سے متعلق اسپیکر کی تنبیہ بھی کام نہ آسکی اور اجلاس ساڑھے دس بجے شروع نہ ہوسکا ایوان کی کارروائی تقریباً ایک گھنٹہ تاخیر سے ڈپٹی اسپیکر شہلا رضا کی صدارت میں شروع ہوئی اجلاس کے آغاز پر ایوان میں ارکان کی تعداد تیس سے کم تھی ،قائد ایوان اور قائد حزب اختلاف سمیت کئی صوبائی وزراء اور اراکین مقررہ وقت پر نہیں پہنچ سکے تھے پی ٹی آئی کے خرم شیر زمان ٹی شرٹ پہن کر ایوان میں پہنچے جس پر سندھ کو انصاف دو، دس سال کا حساب دو کے الفاظ چھپے ہوئے تھے۔ پی ٹی آئی کے رکن ثمر علی خان نے ایوان کو کالعدم تنظیموں کی طرف سے ملنے والی دھمکیوں سے متعلق آگاہ کیا ان کا کہنا تھا کہ انہیں موبائل فون پر سنگین نتائج کی دھمکیاں دی جارہی ہیں اور میرے پاس کوئی کوئی سیکورٹی نہیں ہے اس لئے سیکورٹی بھی فراہم کی جائے۔ سینئر وزیر پارلیمانی امور نثار احمد کھوڑو نے کہا کہ یہ انتہائی اہم مسئلہ ہے ،ثمر علی خان کی سیکورٹی کے لئے محکمہ داخلہ سے بات کرونگا کہ انہیں کالعدم تنظیم کی جانب سے دھمکی دی گئی ہے ،ثمر علی خان نے دھمکیوں سے متعلق پیغامات پیپلز پارٹی کے نثار کھوڑو کو بھی دکھائے۔نثار کھوڑو نے کہا کہ ثمر علی خان کو ملنے والی دھمکیوں کی ہم مذمت کرتے ہیں ، آپریشن کے باوجود کجھ لوگ دہشت گردی کرتے ہیں ، کالعدم تنظیموں کا ہم نے پہلے بھی مقابلہ کیا آئندہ بھی کرینگے۔انہوں نے کہا کہ افسوس کچھ لوگ ان کالعدم اور دہشت گرد تنظیموں سے مذاکرات کی بات کرتے ہیں۔

مزید : کراچی صفحہ اول