خیبر پختونخوا اسمبلی کا اجلاس ، مدرسے پر امریکی بمباری کی شدید مذمت

خیبر پختونخوا اسمبلی کا اجلاس ، مدرسے پر امریکی بمباری کی شدید مذمت

پشاور( نیوز رپورٹر) خیبر پختونخوا اسمبلی کا اجلاس سپیکر اسد قیصر کی صدارت میں شروع ہوا رکن اسمبلی فخر اعظم وزیر کی استدعا پر سپیکر اسد قیصر نے ایوان کے مشورے سے رولز معطل کرکے انہیں قرار داد پیش کرنے کی اجازت دی فخر اعظم وزیر نے قرار داد پیش کرتے ہوئے کہا کہ یہ اسمبلی افغانستان کے صوبہ قندوز میں ایک مدرسہ میں جاری دستار بندی پر امریکی طیاروں کی وحشیانہ بمباری سے سو سے زائد انسانوں کی المناک شہادت کی پر زور مذمت کرتی ہے اور امریکہ کے اس اقدام کو انسانیت سوز اور کھلی دہشت گردی قرار دیتی ہے یہ اسمبلی اس امر کا اظہار بھی کرتی ہے کہ اقوام متحدہ عالمی برادری اور انسانی حقوق کے عالمی ادارے اور اقوام عالم کیلئے امریکہ کی یہ جارحیت درندگی اور ایک کھلا چیلنج ہے جس کی اگر عالمی سطح پر مذاحمت نہیں کی گئی تو دہشت گردی کیخلاف جنگ کے بہانے صرف اور صرف معصوم مسلمانوں کا قتل عام اس طرح جاری رہے گا لہذ ا یہ اسمبلی صوبائی حکومت سے اس امر کی سفارش کرتی ہے کہ وہ وفاقی حکومت سے اس امر کی سفارش کرے کہ انسانی حقوق اور عالم اسلام کی خاطر امریکی درندگی کے اس واقعہ کو اقوام متحدہ تمام عالمی انسانی حقوق کے اداروں اور عالمی برادری میں موثر آواز کے ساتھ اٹھائے اور امریکہ کے سفاکانہ چہرے کو بے نقاب کرے قرار داد پر فخر اعظم وزیر کے علاوہ صوبائی وزیر قانون وپارلیمانی امور امتیاز شاہد قومی وطن پارٹی کے انیسہ زیب طاہر خیلی اور جے یو آئی (ف) کے محمود خان بیٹنی کے دستخط تھے ایوان نے اتفاق رائے سے قرار داد کی منظوری دے دی ایوان نے پی پی پی کے رکن فخر اعظم وزیر کی پیش کردہ ایک اور قرار داد کی بھی اتفاق رائے سے منظوری دے دی جس میں کہا گیا تھا کہ اس معزز ایوان کی یہ رائے ہے کہ اٹھارویں ترمیم صوبائی خود مختاری کے اصولوں پر مبنی ترمیم ہے جس نے پاکستان کے تمام اکائیوں کی یکساں ترقی ،خوشحالی اور جمہوری اقداروں کی بنیاد ڈالی ہے لہذا پاکستان کے تمام اداروں کو اس کی پاسداری ہر حال میں کرنی چاہئے اور اس میں کسی قسم کی ترمیم یا خاتمے کی کوشش نہ کی جائے نیز اٹھارویں ترمیم پر من وعن عمل کیا جائے تاکہ اس کے ثمرات عوام الناس تک پہنچ سکے اور مسلسل جمہوری تعداد کو تقویت حاصل ہو قرار داد پر فخر اعظم وزیر کے ہمراہ انیسہ زیب طاہر خیلی اور وزیر قانون امتیاز شاہد قریشی کے دستخط تھے رکن اسمبلی امجد آفریدی نے اپنے حلقے کے ترقیاتی فنڈز نہ ملنے اور گیس رائیلٹی میں حصہ نہ ملنے کیخلاف ایوان میں احتجاج کیا اور حکومت کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا صوبائی وزیر قانون وپارلیمانی امور امتیاز شاہد قریشی نے ایوان کو بتایا کہ ضلع کرک اور ضلع کوہاٹ کی گیس رائیلٹی کی مد میں حکومت نے ایک ارب روپے کے فنڈز جاری کئے تاہم فاضل رکن امجد آفریدی نے عدالت عالیہ سے حکم امتناعی حاصل کیا جس کی وجہ سے کوہاٹ ڈویژن کو ان فنڈز کے استعمال کے سلسلے میں ناقابل تلافی نقصان ہوا انہوں نے الیکشن کمیشن کی جانب سے ترقیاتی عمل اور بھرتیوں پر پابندی کے اقدام کو غیر قانونی قرار دیتے ہوئے کہا کہ ابھی الیکشن شیڈول کا اعلان نہیں ہوا ہے ایسے میں اس اقدام سے ملک کو ناقابل تلافی نقصان ہورہا ہے صوبائی وزیر قانون امتیاز شاہد قریشی نے سینئر وزیر کی جانب سے خیبر پختونخوا صحت انصاف بل 2018ء ایوان میں پیش کیا جس کے بعد سپیکر اسد قیصر نے اجلاس پیر 16 اپریل سہ پہر 3 بجے تک کیلئے ملتوی کردیا ۔

مزید : کراچی صفحہ اول