چیف جسٹس کے احکامات بھی کام نہ دکھا سکے، لاہور کے شہری پانی کی بجائے ایسی چیز پینے پر مجبور ہوگئے کہ حکام بھی شرم سے پانی پانی ہوجائیں

چیف جسٹس کے احکامات بھی کام نہ دکھا سکے، لاہور کے شہری پانی کی بجائے ایسی چیز ...
چیف جسٹس کے احکامات بھی کام نہ دکھا سکے، لاہور کے شہری پانی کی بجائے ایسی چیز پینے پر مجبور ہوگئے کہ حکام بھی شرم سے پانی پانی ہوجائیں

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن ) سپریم کورٹ کی جانب سے از خود نوٹس لیے جانے کے باوجود انتظامیہ کی نا اہلی کے باعث شہری آلودہ پانی پینے پر مجبور ہیں، گھروں میں فراہم کیے جانے والے پینے کے پانی میں سیوریج کے غلیظ پانی کی آمیزش سےپیٹ کی خرابی اور جلدی بیماریاں پھیلنے لگیں۔

لاہور کے علاقے کوٹ لکھپت میں واسا کی نا اہلی کے باعث سیوریج کے پائپ جگہ جگہ سے ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہیں جن سے نکلنے والا گندا اور ناپاک پانی پینے کے پانی میں مکس ہو کر گھروں میں سپلائی ہو رہا ہے، پانی بھریں تو اس کے اوپر جھاگ بن جاتی ہیں اور فضلے کی بدبو آتی ہے۔ علاقہ مکینوں کا کہنا ہے کہ ایک عرصے سے  پینے کے پانی کی ابتر صورتحال کی طرف بار بار انتظامیہ کی توجہ دلائی گئی ہے لیکن کسی قسم کا ایکشن نہیں لیا گیاجس کی وجہ سے بیکریوں سے پانی خریدنے پر مجبور ہوگئے ہیں۔ 

کوٹ لکھپت کے علاقے ملکاں والا چوک کے  مکین ملک صفدر, شفقت اقبال  اور افتخار حسین نے   تحریری شکایات بھی کی ہیں لیکن مسئلہ حل نہیں کیا جارہا، یہ صرف ان کے ساتھ نہیں بلکہ پورے محلے کیساتھ مسئلہ ہے،  چیف جسٹس آف پاکستان واحد امید باقی رہ گئے ہیں، انہیں چاہیے کہ  انتظامیہ کو فوری اقدامات یقینی بنانے کے احکامات جاری کریں اور پورے لاہور کی رپورٹ طلب کریں۔

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...