مغربی لباس پہننے پر ماں باپ نے اپنی ہی نوجوان بیٹی کی جان لے لی

مغربی لباس پہننے پر ماں باپ نے اپنی ہی نوجوان بیٹی کی جان لے لی
مغربی لباس پہننے پر ماں باپ نے اپنی ہی نوجوان بیٹی کی جان لے لی

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) برطانیہ میں پاکستانی نژاد ماں باپ نے مغربی لباس پہننے پر اپنی نوجوان بیٹی کو قتل کر دیا۔ دی مرر کے مطابق شفیلیا احمد نامی اس 16سالہ طالبہ کو اس کے والدہ افتخار اور والدہ فرزانہ نے دم گھونٹ کر قتل کیا۔ انہوں نے پلاسٹک بیگ سے اس کا سانس بند کر دیا جس سے وہ دم توڑ گئی۔ مغربی طرز کا لباس پہننے کی وجہ سے وہ اکثر شفیلیا پر تشدد بھی کرتے تھے۔ اسے قتل کرنے سے 6ماہ قبل وہ اسے پاکستان لے کر آئے اور یہاں اس کی زبردستی شادی کرنے کی کوشش کی جس پر شفیلیا نے بلیچ پی لیا تاہم اسے بروقت ہسپتال پہنچایا گیا جس سے اس کی جان بچ گئی اور وہ اسے واپس لے کر برطانیہ چلے گئے۔

یہ اپریل 2003ءکا واقعہ تھا، جس کے 6ماہ بعد 11ستمبر 2003ءکو انہوں نے شفیلیا کو قتل کرکے اس کی لاش ٹھکانے لگا دی اور اپنا جرم چھپانے کے لیے پولیس میں شفیلیا کی گمشدگی کی رپورٹ درج کروا دی۔ آج تک پولیس شفیلیا کا سراغ لگانے میں ناکام رہی تاہم اب شفیلیا کی بہن مہوش نے یہ راز اپنے ایک دوست شاہین منیر کو اپنے ماں باپ کی اس واردات کے متعلق بتا دیا۔ مہوش جانتی تھی کہ اس کے ماں باپ نے شفیلیا کو کس طرح قتل کیا اور کیسے اس کی لاش ٹھکانے لگائی۔ شاہین منیرکو مہوش نے یہ بات اس وعدے پر بتائی کہ وہ آگے کسی کو نہیں بتائے گا تاہم اس نے پولیس کو اس کی رپورٹ کر دی جس پر افتخار اور فرزانہ کو گرفتار کر لیا گیا۔ جب انہیں عدالت میں پیش کیا گیا تو ان کی تیسری بیٹی الیشا نے بھی ان کے خلاف گواہی دے دی۔ اب عدالت نے اس مقدمے کا فیصلہ سناتے ہوئے دونوں میاں بیوی کو 25، 25سال قید کی سزا سنا کر جیل بھجوا دیا ہے اور اس سزا میں ان کو پیرول پر رہائی بھی نہیں دی جائے گی۔

مزید : ڈیلی بائیٹس