اہل ایمان کو اجتماعی سجدوں سے محروم نہ کیا جائے، مذہبی قائدین

اہل ایمان کو اجتماعی سجدوں سے محروم نہ کیا جائے، مذہبی قائدین

  

 لاہور(نمائندہ خصوصی)دینی مذہبی اور سیاسی جماعتوں کے راہنماؤں ڈاکٹر صاحبزادہ ابوالخیر محمد زبیر، سینیٹر سراج الحق، پیر اعجاز احمد ہاشمی، پروفیسر ساجد میر، علامہ سید ساجد علی نقوی، مولاناحامد الحق حقانی، علامہ شاہ اویس نورانی، لیاقت بلوچ، حافظ عاکف سعید، پیرسید ہارون علی گیلانی، پیر سید صفدر شاہ گیلانی، پیر عبدالرحیم نقشبندی، مولانا اللہ وسایا، مولانا عبدالمالک، حافظ حسین احمد، مولانا محمد اجمل قادری، علامہ ثاقب اکبر، حافظ زبیر احمد ظہیر، مولانا شعیب الرحمن، مولانا زاہد محمود قاسمی، خواجہ معین الدین محبوب کوریجہ، حافظ عبدالغفار روپڑی، سید ضیاء اللہ شاہ بخاری، علامہ عارف حسین واحدی، پیر غلام رسول اویسی اور عبداللہ گل نے اپنے مشترکہ بیان میں کہاہے کہ کورونا وبا ء کے مقابلہ میں پوری قوم متحد ہے۔ وبا اللہ کی طرف سے آزمائش اور امتحان ہے، مسلم اور غیر مسلم سب ہی متاثر ہیں۔ پاکستان میں اکثریت اور اقلیتوں نے وباء سے بچاؤ کے لیے احتیاطی تدابیر اختیار کی ہیں۔ علمائے کرام نے پہلے بھی احتیاطی تدابیر کے لیے تحفظات کے باوجود تعاون کیاہے اب جبکہ لاک ڈاؤن میں عملاً پابندیاں ختم ہورہی ہیں، وزیراعظم عمران خان اور صوبائی حکومتیں اور ریاست تذبذب میں ہیں جس سے سماجی انتشار و بے اطمینانی بڑھ رہی ہے۔ نائب امیر جماعت اسلامی و سیکرٹری جنرل ملی یکجہتی کونسل لیاقت بلوچ نے کہاہے کہ تمام دینی جماعتوں کے راہنماؤں کا مطالبہ ہے کہ مساجد اور باجماعت نمازوں پر تالہ بندی ختم کی جائے۔ اجتماعی سجدوں سے اہل ایمان کو محروم نہ کیا جائے۔ صفائی نصف ایمان ہے مساجد کی صفائی، کورونا وبا سے بچاؤ کی تمام تدابیر، احتیاطوں کا لحاظ رکھا جائے گا۔ شعائر اسلام پر پابندی سے عوام کے جذبات مجروح اور صبر کا پیمانہ لبریز ہورہاہے۔ عوامی سطح پر عمومی اور دینی سرگرمیوں کا دوہرا معیار نہ بنایا جائے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -