کرونا مزید 5پاکستانیوں کی جان لے گیا، تمام سرحدیں مزید 2ہفتے تک بند رکھنے کا اعلان

کرونا مزید 5پاکستانیوں کی جان لے گیا، تمام سرحدیں مزید 2ہفتے تک بند رکھنے کا ...

  

اسلام آباد، کراچی، لاہور،پشاور، کوئٹہ، مظفر آباد (سٹاف، جنرل رپورٹرز، بیورورپورٹس،مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)پاکستان میں کرونا وائرس پھیلاؤ کا سلسلہ جاری ہے، مزید 5 افراد جاں بحق ہو گئے جس کے بعد ہلاکتوں کی مجموعی تعداد 96 ہوگئی۔پیر کے روز کرونا کے مزید 255کیسز سامنے آئے ہیں اور 4 ہلاکتیں بھی رپورٹ ہوئی ہیں۔ پنجاب میں 192 کیسز اور 3 ہلاکتیں، سندھ 41 کیسز ایک ہلاکتہوئی پیر کے روز کرونا کی بیماری سے مزید4افراد دم توڑ گئے جبکہ مزید کیسز رپورٹ ہونے سے ملک میں متاثرین کی تعداد 5 ہزار ہو گئی۔دنیا بھر میں ساڑھے 18 لاکھ لوگوں کو متاثر اور ایک لاکھ 14 ہزار کے قریب اموات کا سبب بنے والے اس مہلک وائرس کا پاکستان میں اپریل کے ماہ سے مزید تیز ہوگیا ہے۔وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے صوبے میں مزید 41 کیسز اور ایک موت کی تصدیق کی۔کراچی میں پریس کانفرنس میں انہوں نے بتایا کہ سندھ میں گزشتہ 24 گھنٹوں میں 531 ٹیسٹ کیے جس میں 41 لوگ مزید متاثر ہوئے جس کے بعد متاثرین کی تعداد 1452 ہوگئی ہے۔انہوں نے کہا کہ گزشتہ 24 گھنٹوں میں ایک موت بھی ہوئی جس کے بعد انتقال کرنے والوں کی تعداد 31 ہوگئی ہے۔ساتھ ہی ان کا کہنا تھا کہ صوبے میں مزید 30 لوگ صحتیاب بھی ہوئے ہیں پیر کو بلوچستان میں بھی ایک اور کیسز کیس تصدیق کی گئی۔ترجمان بلوچستان حکومت لیاقت شاہوانی کا کہنا تھا کہ صوبے میں ایک اور کیس کے بعد متاثرین کی تعداد 231 تک پہنچ گئی۔سرکاری سطح پر اعداد و شمار بتانے والی ویب سائٹ کے مطابق اسلام آباد میں مزید 12 افراد وائرس سے متاثر ہوئے۔ان نئے متاثرین کے بعد وفاقی دارالحکومت میں متاثرہ افراد کی تعداد 131 تک پہنچ گئی۔ادھر جہاں پاکستان میں کیسز اور اموات میں تیزی دیکھی جارہی ہے وہیں صحتیاب افراد کی تعداد بھی بڑھ رہی ہے۔پیر کو آنے والے نئے اعداد و شمار میں پاکستان میں مزید 67 افراد وائرس کو شکست دے کر صحتیاب ہوگئے۔جس کے بعد ملک میں صحتیاب ہونے والوں کی تعداد 1028 سے بڑھ کر 1095 تک پہنچ گئی ہے۔فاقی دارالحکومت میں آج اب تک کورونا کے مزید 12 کیسز سامنے آئے ہیں جو سرکاری پورٹل پر رپورٹ ہوئے ہیں۔اسلام ا?باد میں نئے کیسز کے بعد متاثرہ مریضوں کی تعداد 131 ہوگئی ہے۔ لاہور کے علا قے سوڈیوال کی اسکندریہ کالونی میں ایک ہی گلی میں 42 افراد کے کورونا سے مبتلا ہونے کے بعد گلی کو سیل کردیاگیا۔ پولیس کے مطابق 57 گھروں پر مشتمل اسکندریہ کالونی کی ایک گلی کو مکمل طور پر سیل کیا گیا ہے کیونکہ تین روز قبل ضلعی انتظامیہ نے یہاں 10 افراد کے کورونا وائرس میں مبتلا ہونے کی تصدیق کی تھی۔ پولیس نے بتایا کہ اگلے ہی روز مزید 10 افراد اس وائرس کا شکار ہوئے جب کہ اتوار کو 22 مریض سامنے آئے ہیں۔ ضلعی انتظامیہ کے مطابق اسکندریہ کالونی کی اس گلی میں اب تک 42 افراد میں کورونا وائرس کی تصدیق ہو چکی ہے، متاثرہ گلی میں رہائش پذیر افراد کے کورونا ٹیسٹ بھی کیے جا رہے ہیں۔وزارت داخلہ نیکورونا وائرس کی صورتحال کے پیش نظر تمام سرحدیں مزید 2 ہفتے تک بند رکھنے کا اعلان کردیا۔وزارت کی جانب سے جاری کردہ نوٹیفکیشن میں کہا گیا کہ قومی رابطہ کمیٹی کے فیصلے کے مطابق وزارت داخلہ نے تمام بارڈرز 2 ہفتے تک مزید بند رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔وزرات داخلہ کے مطابق یہ فیصلہ کورونا پھیلاو کو روکنے کے لیے کیا گیا ہے۔نشتر ہسپتال میں فرائض انجام دینے والے مزید 4 ڈاکٹروں میں کورونا کا ٹیسٹ مثبت آ گیا جس کے بعد وائرس سے متاثرہ ڈ اکٹروں کی مجموعی تعداد 17 ہو گئی ہیکراچی میں کرونا وائرس پر قابو پانے کیلیے ضلع وسطی کی بھی 5 یوسیز کو مکمل لاک ڈاؤن کرنے کے احکامات جاری کر دیئے ہیں۔احکامات ڈپٹی کمشنر ضلع وسطی کی جانب سے جاری کیے گئے جس میں یوسی 15، 22، 24 اور 25، 45 اور47 شامل ہے۔یوسی 15 میں سرسید اور سیکٹر سیون ڈی ٹو نارتھ کراچی کا علاقہ شامل ہے۔ یوسی 22 میں بلاک ایف حیدری نارتھ ناظم آباد کا علاقہ شامل جبکہ یوسی 24، 25 میں سیکٹر 15 اے، 15 بی اور بفروزن کے علاقے شامل ہیں۔اس کے علاوہ یوسی 45 ہادی مارکیٹ میں ناظم آباد نمبر 2، 3 اور 4 جبکہ یوسی 47 پاپوش نگر میں ناظم آباد 5 اے، 5 سی اور پاپوش نگر کے علاقے شامل ہیں۔وفاقی حکومت نے کرونا وائرس کا مشتبہ کیس سامنے آنے پر پاک سیکرٹریٹ کے کوہسار بلاک کو بند تین روز کیلئے بند کردیا ہے،وزارت اورسیز پاکستان کے دفتر واقع کوہسار بلاک میں کرونا وائرس کا مشتبہ کیس سامنے آنے پر پورے کوہسار بلاک کو بند کردیا گیا ہے اور تمام ملازمین کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ اگلے تین روز تک اپنے گھروں میں رہیں اور نئی ہدایات کا انتظار کریں

پاکستان ہلاکتیں

نئی دہلی، واشنگٹن، روم،لندن(مانیٹرنگ ڈیسک،نیوز ایجنسیاں)دنیا بھر میں کرونا وائرس نے ایک لاکھ 14ہزار سے زائد زندگیاں چھین لیں، ساڑھے 18 لاکھ سے زائد افراد میں وائرس کی تصدیق ہوئی ہے، جبکہ جبکہ 4 لاکھ 23 ہزار سے زائد افراد اس سے صحت یاب ہو چکے ہیں۔امریکا میں کورونا وائرس میں مبتلا افراد کی تعداد 5 لاکھ 60 ہزار سے تجاوز کر گئی، گزشتہ 24 گھنٹے کے دوران مزید ایک ہزار 538 افراد کورونا سے ہلاک ہوئے جس کے بعد مرنے والوں کی مجموعی تعداد 22 ہزار سے زیادہ ہوگئی ہے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق برطانیہ میں مزید 733 افراد کورونا کے سبب جان کی بازی ہار گئے ہیں جس کے بعد وہاں اموات کی تعداد 10 ہزار سے اوپر چلی گئی ہے۔اسپین میں مزید 603 ہلاکتوں کے بعد تعداد 17 ہزار سے اوپر چلی گئی ہے اور وہاں اب تک 1 لاکھ 66 ہزار سے زائد افراد اس کا شکار ہیں اور62 ہزار سے زیادہ افراد صحتیاب ہوچکے ہیں۔جرمنی میں مزید 151 افراد جان سے گئے جس کے بعد مرنے والوں کی تعداد 3 ہزار سے زیادہ ہوچکی ہے، متاثرہ افراد کی تعداد 1 لاکھ 27 ہزار سے زائد ہے اور60 ہزار سے زیادہ افراد صحتیاب ہوچکے ہیں۔اٹلی میں کورونا سے مزید 431 افراد ہلاک ہوئے ہیں، مرنے والوں کی تعداد 19 ہزار سے زیادہ ہے، وہاں 1 لاکھ 56 ہزار سے زائد مریض ابھی بھی ہیں جبکہ 34 ہزار سے زائد افراد صحتیاب ہوچکے ہیں۔فرانس میں اس وبا سے مزید 561 افراد کی جان چلی گئی ہے جس کے بعد ہلاکتوں کی تعداد 14 ہزار سے تجاوز کر گئی ہے، 1 لاکھ 32 ہزار سے زائد افراد کورونا کا شکار ہیں اور 27 ہزار سے زائد صحتیاب ہوگئے ہیں کورونا کے باعث سب سے زیادہ متاثرہ ممالک اٹلی اور فرانس میں اموات اور نئے کیسز کی تعداد میں مسلسل کمی واقع ہو رہی ہے جب کہ چین میں کئی ہفتوں بعد 100 سے زائد نئے کیسز رپورٹ ہوئے ہیں۔بھارتی حکومت کرونا وائرس پر قابو پانے میں ناکام ہوگئی، مودی حکومت کا لاک ڈاؤن بھی عالمی وبا نہیں روک پایا جس کے باعث اب تک 300 سے زائد افراد لقمہ اجل بن گئے۔ بھارت میں تمام تر کارروائیوں کے باوجود کرونا وائرس کے نئے کیسز کی تعداد میں بتدریج اضافہ ہوتا جارہا ہے، کچھ شہروں میں حکام نے لاک ڈاؤن سے منسلک پابندیوں کو مزید سخت کرتے ہوئے عندیہ دیا تھا کہ اس وبا پر قابو پانے کے لئے اس کی مدت میں توسیع کی جاسکتی ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ مودی حکومت کا ایک ارب سے زائد آبادی کو لاک ڈاؤن کرنے کا فیصلہ بھی جان لیوا وبا پر قابو نہیں پاسکا اور ملک بھر میں 9 ہزار سے زائد افراد کو متاثر کرگیا۔رپورٹ کے مطابق بھارت میں چوبیس گھنٹوں کے دوران 35 افراد کی موت کے بعد اموات کی تعداد 331 تک پہنچ گئی ہے۔

عالمی ہلاکتیں

مزید :

صفحہ اول -