چیف جسٹس آف پاکستان کا نائب قاصد بھی کورونا کا شکار، چیف جسٹس گلزار احمد اور اہلخانہ کا ٹیسٹ منفی، تمام جج صاحبان کےبھی ٹیسٹ

چیف جسٹس آف پاکستان کا نائب قاصد بھی کورونا کا شکار، چیف جسٹس گلزار احمد ...
چیف جسٹس آف پاکستان کا نائب قاصد بھی کورونا کا شکار، چیف جسٹس گلزار احمد اور اہلخانہ کا ٹیسٹ منفی، تمام جج صاحبان کےبھی ٹیسٹ

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) دنیا بھر کی طرح پاکستان میں بھی کورونا کے مریضوں کی تعداد میں آئے روز اضافہ ہوتا جا رہا ہے اور اب صحافی اسد علی طور نے دعویٰ کیا ہے کہ چیف جسٹس آف پاکستان کے نائب قاصد کو بھی کورونا ہوگیا، خود چیف جسٹس گلزار احمد بھی عدالت نہیں آئے جس کی وجہ سے بینچ ٹوٹ گیااور ان کے ٹیسٹ کی ابھی رپورٹ موصول نہیں ہوئی جس کی وجہ سے از خود انہوں نے اپنے آپ کو گھر پر ہی قرنطینہ کرلیا  جبکہ ڈاکٹروں کی ٹیم نے تمام عدالت عظمیٰ کے جج صاحبان اور ان کے عملے کے ٹیسٹ کا فیصلہ کیا ہے ۔ بعدا زاں نجی ٹی وی چینل نے بتایا کہ چیف جسٹس ، ان کے اہلخانہ اور جسٹس اعجازالاحسن کے ٹیسٹ کی رپورٹ آگئی جو منفی تھی ۔ 

ٹوئٹر  پر انہوں نے لکھا ’’ دوڈاکٹروں کی ٹیم ڈاکٹر خرم اور ڈاکٹر یاسر 3  پیرا میڈیکس کے ہمراہ چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس گلزار کی عدالت کے 20 رکنی عملے کے ٹیسٹ کے لیے پہنچے ہیں، چیف جسٹس کا نائب قاصد پہلے ہی کورونا کا پازیٹو  اور پولی کلینک ہسپتال میں قرنطینہ ہے ، آج چیف جسٹس عدالت نہیں آئے جس کی وجہ سے ان کے بینچ کو لسٹ سے نکال دیا گیا‘‘

اپنی ایک اور ٹوئیٹ میں اسد علی طور نے بتایا کہ ’’چیف جسٹس گلزار احمد اور ان کے سیکریٹری مسعود الحسن کا بھی گزشتہ روز کورونا ٹیسٹ کیاگیا اور اس کا رزلٹ آنا ابھی باقی ہے ، چیف جسٹس رپورٹ آنے کے انتظار میں گھر  میں ہی ازخود  قرنطینہ ہیں‘‘۔

ایک اور ٹوئیٹ میں ان کاکہناتھاکہ ’’  ڈاکٹر خرم نے سپریم کورٹ کے تمام جج صاحبان اور ان کے عملے کے ٹیسٹ کرنے کا فیصلہ کیا ہے اور اس وقت ٹیسٹ ہورہے ہیں‘‘

بعدازاں اب تک نیوز نے بتایا کہ چیف جسٹس اوراہل خانہ کےکوروناٹیسٹ کی رپورٹ آگئی، چیف جسٹس گلزاراحمدکاکوروناٹیسٹ منفی آیا جس کے بعد چیف جسٹس نے قرنطینہ میں نہ جانے کا فیصلہ کیا، ذرائع کے حوالے سے یہ بھی بتایا کہ  جسٹس اعجازالاحسن کاکوروناٹیسٹ بھی منفی آیا،چیف جسٹس کےاہلخانہ کاکوروناٹیسٹ بھی منفی آیا۔

ادھر اسد علی طور نے بھی کورونا رپورٹ منفی آنے کی خبر دیتے ہوئے لکھا کہ ’’ اچھی خبر، چیف جسٹس گلزار احمد کا کورونا ٹیسٹ نیگٹو آیا لیکن سپریم کورٹ صرف اسی صورت میں دوبارہ کام شروع کرے گی جب عدالتی عملے کے تمام 35 افراد کے جن کے آج ٹیسٹ ہوئے ، رپورٹ منفی آئے گی ، ورنہ تمام بینچ ڈی لسٹ کردیئے جائیں گے ‘‘۔

اسد علی کی ٹوئیٹس پر   صحافی عاصمہ شیرازی نے لکھا ’’ اوہ نو‘‘

ایک اور صارف نے لکھا کہ ’’ انہیں بھی ٹیسٹ کروانا چاہیے ‘‘

ایک اور صارف حیرت کا اظہار کرتےہوئے لکھا کہ ’’ آج نہیں آئے چیف جسٹس صاحب، آئے ہیں شاید، چیک کرلیں، از خود نوٹس کی سماعت بھی ہوئی ‘‘۔

اخترملک نے اس پر کچھ تبصرہ تو نہیں کیا لیکن سینئر صحافیوں کو ٹیگ ضرور کیا۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -کورونا وائرس -اہم خبریں -