حلیم عادل شیخ پیپلز پارٹی کی سندھ حکومت پر برس پڑے،وزیر اعلیٰ مراد علی شاہ پر سوالات کی بوچھاڑ کر دی

حلیم عادل شیخ پیپلز پارٹی کی سندھ حکومت پر برس پڑے،وزیر اعلیٰ مراد علی شاہ ...
حلیم عادل شیخ پیپلز پارٹی کی سندھ حکومت پر برس پڑے،وزیر اعلیٰ مراد علی شاہ پر سوالات کی بوچھاڑ کر دی

  

کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن)پاکستان تحریک انصاف کے مرکزی نائب صدر اور سندھ اسمبلی میں پارلیمانی لیڈر حلیم عادل شیخ نے کہا کہ شکریہ کپتان شکریہ عمران خان آپ نے جو غریبوں کے لئےجو  کہا کر دکھایا،غریب عوام کا احساس ہی سب کچھ کرواتا ہے،جن کو احساس نہیں ہوتا وہ کرپشن کرکے عوام کا مال کھاجاتے ہیں،

وزیر اعلی سندھ کے پاس ناجانے کونسا الہ دین کا چراغ ہے جس کو رگڑ کر تیزی سے کام کرتے ہیں،سندھ کے شہروں میں کسی بھی ہسپتال میں وینٹیلیٹر کی سہولیات موجود نہیں، سندھ حکومت نےراشن کس کس کو دیا ؟کوئی پتا نہیں ہے۔

تفصیلات کے مطابق اپنے ویڈیو پیغام میں حلیم عادل شیخ نے کہا کہ لاک ڈاؤن کی وجہ پیدا ہونے والی صورتحال کے پیش نظر وفاقی حکومت کے احساس ایمرجنسی کیش پروگرام کے تحت مستحقین میں گزشتہ پانچ دنوں 28 لاکھ لوگوں میں 23 ارب سے زائد رقم تقسیم کر دی ہے،تمام رقم بغیر کسی سیاسی سفارش کے غریب نادار لوگوں میں تقسیم کی گئی ہے جس کا  سلسلہ جاری ہے۔حلیم عادل شیخ کا کہنا تھا کہ وزیر اعلیٰ سندھ نے کہا 15 دن میں ہم نے سندھ میں ایک لاکھ لوگوں کو راشن دے دیا  جبکہ دو راتوں بعد دوبارہ بیان دیا کہ اڑھائی لاکھ لوگوں میں راشن تقسیم ہوگیا، وزیر اعلی کے پاس ناجانے کونسا الہ دین کا چراغ ہے جس کو رگڑ کر تیزی سے کام کرتے ہیں؟ سارا نظام وزیر اعلیٰ کے پاس ہے؟محکمہ صحت بھی آپکے پاس ہے جس کا 140 ارب کا بجٹ دس سال سے آپ کے پاس ہے،سندھ کے شہروں میں کسی بھی ہسپتال میں وینٹیلیٹر کی سہولیات موجود نہیں ہیں،کرونا کی تشخیص کی کٹس بھی وفاق دے رہا ، عوام کو امداد بھی وفاق دے رہا اور چمپئن آپ بن کر عوام کے سامنے آنا چاہ رہے ہیں۔

انہوں مزید کہا کہ سندھ حکومت سے پوچھا جاتا ہے کہ راشن کس کس کو دیا؟ یہ لوگ زکوٰاۃ مستحقین کی لسٹیں دکھاتے ہیں،زکوٰۃمتاثرین تو پہلے ہی سندھ کے بجٹ سے رقم لےرہے ہیں۔ وزیر اعلیٰ نے کہا کہ بارہ بارہ ہزار دیکر کرونا پھیلایا جارہا ہے،سندھ حکومت چاہتی ہے یہ اربوں روپے بھی ان کو دیئے جاتے تاکہ راتوں رات راشن کی طرح تقسیم ہوجاتے، سندھ کی عوام بتائے کیا یہ پیسے سندھ حکومت کو دیئے جائیں؟کیا سندھ کی عوام سندھ حکومت کے ہاتھوں پیسے لینا چاہتی ہے؟ اگر ایسا ہوتا تو کسی کو بھی پیسے نہیں ملتے۔

مزید :

علاقائی -سندھ -کراچی -