تین خواتین سمیت 4افراد قتل‘ حادثے میں ایک جاں بحق‘ لاش برآمد 

تین خواتین سمیت 4افراد قتل‘ حادثے میں ایک جاں بحق‘ لاش برآمد 

  

لیہ، بارہ میل، رحیم یار خان، ٹھٹھہ صادق آباد، شاہ جمال (نمائندہ پاکستان، نامہ نگار، بیورو رپورٹ)  سرائے سدھو کے رہائشی کار ڈرائیور کو راوالپنڈی میں نامعلوم افراد بے دردی سے قتل کردیا،دو دن تک نعش روڈ کے کنارے لاوارث پڑی رہی،راہ گیر کی نشاندہی پر مقامی (بقیہ نمبر8صفحہ6پر)

پولیس کو اطلاع دی گئی،ورثاء کو اطلاع ملتے ہی نعش سرائے سدھو لے آئے جہاں پرنعش کو نماز جنازہ کے بعد دفن کردیا گیا۔تفصیل کے مطابق سرائے سدھو نزد جھنڈیر والاکا رہائشی محمد رمضان ولد محمد اسلم قوم چدھڑ عمر تقریبا 30سال جو کہ کافی عرصہ سے راوالپنڈی میں کار ڈرائیور تھا جس کو گذشتہ دنوں نامعلوم افراد نے ڈنڈوں،سوٹوں اور آہنی سریوں کے وار کرکے بے دردی سے قتل کردیا اور نعش کو مین روڈ کے کنارے کے ساتھ ہی پھینک دیا دو دن تک نعش روڈ کے کنارے کے ساتھ لاوارث پڑی رہی،راہ گیر کی نشاندہی پر مقامی پولیس موقع پر پہنچ کر نعش کو اپنے قبضہ میں لے لیا اور ورثاء کو اطلاع دی جس پر ورثاء راوالپنڈی پہنچ گئے اور نعش کو وصول کرکے سرائے سدھو نزد جھنڈیر والا میں آہوں اور سسکیوں کے ساتھ سپردخاک کردیا دوست احباب اور رشتہ دار دھاڑیں مار کر روتے رہے۔ گھریلو جھگڑے پر سسرالیوں نے شوہر سے مل کر بہو کو زہر دینے کے بعد گلہ دبا کر موت کے گھاٹ اتار دیاشوہر مقتولہ بیوی کی لاش کو ہسپتال چھوڑ کر فرار۔  گزشتہ سے پیوستہ شب قتل کا واقعہ سردار گڑھ کے علاقہ میں پیش آیا ہے۔ ورثا نے الزام عائد کیا کہ صدف بی بی نامی 24 سالہ بیٹی کو زہر دینے کے بعد اسکے شوہر اطہر علی نے بھائیوں مظہر علی اورغضنفر علی کی مدد سے گلہ گھونٹ کر قتل کیا ہے۔ انکا مزید کہنا تھا کہ اس سے قبل بھی سسرال والے صدف بی بی پر تشدد کرتے تھے ایک روز قبل روٹھی بیوی صدف بی بی کو منا کر میکے سے گھر لے گئے جسکے بعد اسے کو قتل کر دیاگیا جبکہ شوہر اطہر علی سمیت تمام ملزمان صدف بی بی کی لاش شیخ زید ہسپتال چھوڑ کر فرار ہوگئے۔واقعہ کی اطلاع ملتے ہی مقامی پولیس تھانہ سٹی اے ڈویژن شیخ زید ہسپتال پہنچ گئی اور مقتولہ صدف بی بی کی لاش تحویل میں لیکر پوسٹمارٹم کیلئے ورثا کے بیان پر کارروائی کرتے ہوئے مقتولہ کے شوہر اور سسرالیوں کی تلاش شروع کردی ہے۔ ذرائع کے مطابق مقتولہ صدف بی بی پانچ بچوں کی ماں تھی اور اسکی 8 سال قبل اطہر علی سے شادی ہوئی تھی جس کو زہر دیکر اورگلا دبا کر قتل کیا گیاہے۔ زمین کے تنازعہ پر بھائی نے فائرنگ کرکے شادی شدہ ہمشیرہ کو موت کے گھاٹ اتار دیا اہل علاقہ نے ملزم کو موقع پر پکڑ لیا  تھانہ کوٹ سمابہ کی حدود چک 100 پی کے رہائشی محمد نعیم نے پولیس کو اپنی دی جانے والی تحریری شکایت میں بیان کیا کہ گزشتہ سے پیوستہ روز اسکے سالے عطا اللہ نے زمین کے تنازعہ پر موقع پاکر اسکی بیوی اور اپنی حقیقی ہمشیرہ مقصوداں بی بی کو فائرنگ کرکے موت کے گھاٹ اتار دیا اور فرار ہونے کی کوشش کی جسے اہل علاقہ نے آلہ قتل سمیت پگڑ کر پولیس کے حوالے کردیا۔ پولیس نے موقع پر پہنچ کر مقتولہ کی مقصوداں بی بی کی لاش تحویل میں لیکر پوسٹ مارٹم کے لیے ہسپتال منتقل کردی۔ مقتولہ کے شوہر محمد نعیم کی رپورٹ پر پولیس نے گرفتار ملزم سالے کے خلاف قتل کا مقدمہ درج کرکے کارروائی شروع کردی۔ ٹھٹھہ صادق آباد کے نواحی چک نمبر 138 دس آر کا رہائشی محمد جاوید ولد محمد شریف جوکہ واپڈا خانیوال میں ملازم تھا، خانیوال جاتے ہوئے موٹر سائیکل حادثہ میں شدید زخمی ہوکر نشتر ہسپتال ملتان میں زیرِ علاج تھا، 4 روز تک زندگی و موت کی کشمکش میں مبتلا رہنے کے بعد واپڈا ملازم محمد جاوید گزشتہ روز نشتر ہسپتال ملتان میں زندگی کی بازی ہارتے ہوئے خالق حقیقی سے جا ملا، نمازجنازہ مرکزی جنازہ گاہ چک نمبر 138 دس آر میں ادا کی گئی جس میں واپڈا آفیسران ملازمین سیاسی سماجی عوامی شخصیات نے شرکت۔ ۲ چوک مہر پور کے ویرانے سے نا معلوم شخص کی لاش برآمد۔مقامی لوگوں کی اطلاع پر پولیس تھانہ شاہ جمال نے چوک مہر پور کے ویرانے سے نا معلوم شخص کی نعش برآمد کر لی جس کی شناخت نہ ہو سکی ہے نعش کو ڈسٹرکٹ ہسپتال مظفرگڑھ منتقل کر دیا گیا ہے۔ لیہ میں جنرل بس اسٹینڈ کے قریب شوہر نے بیوی کو فائر مار کر ابدی نیند سلادیا، حملے میں ساس زخمی ہوگئی۔

حادثات

مزید :

ملتان صفحہ آخر -