سسر پر توہین مذہب کا جھوٹا الزام لگانے والا داماد گرفتار

سسر پر توہین مذہب کا جھوٹا الزام لگانے والا داماد گرفتار
سسر پر توہین مذہب کا جھوٹا الزام لگانے والا داماد گرفتار

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

گوجرانوالہ (ڈیلی پاکستان آن لائن )گوجرانوالہ میں پولیس نے قرآن جلانے کا جھوٹا الزام لگانے والے ایک شخص کو گرفتار کرتے ہوئے ملزم کے خلاف مقدمہ درج کرلیا ۔
سوشل میڈیا ویب سائٹ العریبیہ اردو نے پولیس حکام کے حوالے سے بتایا کہ ملزم پارس سلیم مسیح نے اپنے پادری سسر آصف ندیم پر قرآن جلانے کا جھوٹا الزام لگایا اور ایک جعلی ٹک ٹاک اکاو¿نٹ سے کلپ سوشل میڈیا پر شیئر کیا۔سٹی پولیس افسر (سی پی او) ایاز سلیم کے مطابق پولیس نے بروقت کارروائی کرتے ہوئے شہر کے پرامن ماحول کو خراب ہونے سے بچا لیا ہے۔پولیس نے ملزم کے اقبالی بیان پر مشتمل ایک ویڈیو بھی جاری کی ہے جس میں مبینہ ملزم پارس سلیم مسیح اقبال جرم کرتے ہوئے کہتا ہے کہ " میری بیوی کچھ دنوں سے ناراض ہو کر میکے چلی گئی تھی۔ میں نے ٹک ٹاک پر سسر کی تصویر لگا کر کلپ بنایا تھا کہ قرآن پاک جلایا گیا ہے۔ میری ویڈیو جھوٹی ہے میں نے سسر سے بدلہ لینے کے لئے ویڈیو بنائی تھی۔"
پولیس نے ملزم کے قبضے سے وہ موبائل فون بھی برآمد کر لیا جس سے ویڈیو کلپ بنایا گیا اور جعلی ٹک ٹاک اکاو¿نٹ بنا کر اس کلپ کو شیئر کیا گیا تھا۔
پاکستان میں توہینِ مذہب کے الزامات کے واقعات اکثر و بیشتر سامنے آتے رہے ہیں لیکن حالیہ واقعہ اس لحاظ سے منفرد ہے کہ اس میں توہینِ قرآن کا الزام لگانے والے شخص نے اس قانون کو ذاتی مقاصد کے لئے استعمال کرنے کی کوشش کی لیکن وہ خود قانون کے شکنجے میں آ گیا۔اس سے قبل سامنے آنے والے مقدمات میں جس شخص پر الزام لگتا تھا اسے قانونی کارروائی کا سامنا کرنا پڑتا تھا۔مذہب کے نام پر جلاو گھیراو کے واقعات کی روک تھام اور مذہبی قوانین پر نظر ثانی کے لئے پاکستان پر حالیہ کچھ عرصے سے بین الاقوامی برادری کا دباو بڑھا ہے۔