گرفتاریاں، نظربندی: پنجاب میں پی ٹی آئی، عوامی تحریک کے 10 ہزار افراد لسٹ پر موجود

گرفتاریاں، نظربندی: پنجاب میں پی ٹی آئی، عوامی تحریک کے 10 ہزار افراد لسٹ پر ...
گرفتاریاں، نظربندی: پنجاب میں پی ٹی آئی، عوامی تحریک کے 10 ہزار افراد لسٹ پر موجود

  

لاہور (ویب ڈیسک ) پنجاب میں تحریک انصاف اور عوامی تحریک کے لیڈروں اور ٹکٹ ہولڈرز 10 ہزار کی تعداد میں گرفتاری اور نظربندی کیلئے لسٹ پر ہے۔ تفصیلات کے مطابق صوبائی حکومت نے گرفتاریوں کو خفیہ رکھنے کیلئے سپیشل برانچ میں ڈیٹا بنک قائم کیا ہوا ہے جس کی خفیہ رپورٹ وزیراعلیٰ، چیف سیکرٹری، ہوم سیکرٹری اورآئی جی کو بھجوائی جاتی ہے۔ تحریک انصاف کیخلاف لاہور کے علاوہ پنجاب کے دیگر اضلاع میں تین روز سے کریک ڈاﺅن کیا جارہا ہے جبکہ عوامی تحریک کیخلاف کریک ڈاﺅن ایک ہفتے سے جاری ہے۔ تین دن میں پنجاب سے تحریک انصاف کے لیڈروں، ٹکٹ ہولڈرز کی روزانہ 500 کی تعداد میں گرفتار کیا گیا ہے جنہیں مینٹیس آف پبلک آرڈر کے تحت 1 ماہ کیلئے بند کیا جارہا ہے جبکہ دوسرے قانون کے تحت 15 روز کیلئے گرفتار ی کی جارہی ہے تاکہ اگست ختم ہونے پر انہیں رہا کیا جائے۔سپیشل برانچ کے ڈیٹا بنک سے ملنے والی تفصیلات کے مطابق شیخوپورہ میں پی ٹی آئی کے تین روز میں 50، لیہ سے 35، مظفر گڑھ سے 48، ننکانہ صاحب سے 35، راجن پور میں 22، ڈی جی خان سے 22، پاکپتن سے 23، اوکاڑہ میں 6، ساہیوال میں 76، وہاڑی میں 46، خانیوال میں 36، لودھراں میں 9، ملتان میں 28، چنیوٹ میں 9، جھنگ میں 7، ٹوبہ ٹیک سنگھ میں 22، فیصل آباد میں 47، بھکر میں 27، میانوالی میں 100، خوشاب میں 24، سرگودھا میں 38، چکوال میں 10، راولپنڈی میں 119، ناروال میں 26، سیالکوٹ میں 124، منڈی بہاﺅالدین میں 12، حافظ آباد میں 9، گجرات میں 149، گجرانوالہ میں 110، قصور میں 35 افراد کو گرفتار کیا گیا ہے تاہم پی ٹی آئی کے 1200 لیڈروں، پارٹی ٹکٹ ہولڈرز کو نظر بند کیا جاچکا ہے۔ اسی طرح عوامی تحریک کے 10 اگست تک گرفتار افرد کی تعداد 2002 تھی جبکہ 11 اگست کو شدید کریک ڈاﺅن کر کے 2092 مزید افراد گرفتار کئے گئے جس کے بعد 13 اگست تک عوامی تحریک کے گرفتار افراد کی تعداد 6200 ہو گئی ہے جبکہ ان کی 1 ہزار نظر بندیا ں کی گئی ہیں۔ انتظامی افسر اسے صوبے کی تاریخ کا سب سے بڑا کریک ڈاﺅن قرار دے رہے ہیں۔

مزید : قومی